برقع کی آڑ میں ہوتی ہے فرضی ووٹنگ: گری راج سنگھ

Share Article

 

بیگو سرائے میںپولنگ اگرچہ ہو چکی ہے لیکن یہاں کے دونوں امیدوار گری راج سنگھ اور کنہیا کمار مسلسل مختلف مسائل کو لے کر ٹوئٹ پر سرگرم ہیں۔ شیوسینا کے ذریعہبرقع پر پابندی لگانے کے مطالبہ کے بعد اب گری راج سنگھ نے بھی اس مطالبے کو دہرایا ہے۔ گری راج سنگھ نے کہا ہے ‘حالیہ وقت میں دیکھنے کو ملا ہے کہ برقع کی آڑ میں بہت سے دہشت گردانہ واقعات ہوئے ہیںاور الیکشن میں بھیکافی فرضی ووٹنگ ہوئی ہے۔ دہشت گردی اور فرضی ووٹنگ کسی بھی جمہوریت کے اوپر حملہ ہے۔ الیکشن کمیشن کو اسے بلا تاخیر بین کر دینا چاہئے۔

 

گری راج سنگھ اتنے پر ہی نہیں رکے اور اپوزیشن پر بھی زوردار حملہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ آج دہشت گردی کے خلاف سری لنکا میں پوری اپوزیشن حکومت کے ساتھ ہے۔ ہندوستان میں اپوزیشن کے رویے کی وجہ سے دہشت گردی اور نکسلزم بڑھ رہی ہے۔ آخر ہندوستان کی اپوزیشن خامو ش کیوں و رہتی ہے؟ وہ کن کے ساتھ ہے؟ اپوزیشن کا ‘ثبوت’ لفظ دہشت گردوں اور نکسل کے لئے امرت کاکام کر رہا ہے۔

 

مسعود اظہر کو عالمی دہشت گرد قرار دیئے جانے پر دہشت گردی کے خلاف بھارت کو ملی بڑی سفارتی فتح پر گری راج سنگھ نے کہا کہ ‘جھکتی ہے دنیا جھکانے والا چاہئے‘۔

وہیں، دوسری طرف وارانسی سے پرچہ نامزدگی کرنے والے تیجبہادر کی امیدواری منسوخ کئے جانے پر کنہیا کمار نے سوال اٹھایا ہے۔ کنہیا نے کہا ہے کہ بھارت کے آئین نے تمام شہریوں کو بغیر کسی امتیاز کے الیکشن لڑنے کا حق دیا ہے۔ اگر سرکاری مشینری کا غلط استعمال کرکے کسی کو الیکشن لڑنے سے روکا جا رہا ہے تو تمام انصاف پسند لوگوں کو اس کی پرزور مخالفت کرنی چاہیے۔

 

کنہیا نے مہاراشٹر میں ہوئے نکسلی حملے پر غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پورا ملک گڑھ چرولی میں نکسلیوں کے حملے میں 16 جوانوں کے شہید ہونے پر دکھی ہے۔ اس طرح کے بزدلانہ حملے انسانیت کو شرمسار کرتے ہیں۔ شہید جوانوں کے اہل خانہ کے تئیں میری ہمدردی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *