ایران کی ویانا اجلاس کے بعد یورینیم افزودگی کی مجاز حد سے تجاوز کرنے کی دھمکی

Share Article

 

ایران کی سرکاری نیوز ایجنسی ‘فارس’ نے باوثوق حکومتی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ ویانا میں یورپی ملکوں کے اجلاس کے بعد تہران یورینیم افزودگی کی مجاز مقدار میں اضافہ کر دے گا۔نیوز ایجنسی کے مطابق اگر ایران امریکی پابندیوں کے خلاف یورپی یونین سے اپنے مطالبات منوانے میں ناکام رہتا ہے تو تہران کے پاس معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یورینیم کی افزدوگی بڑھانے کے سوا کوئی راستہ نہیں بچے گا۔ایرانی مندوب نے جمعہ کے روز ایک بیان میں کہا تھا کہ 2015ء کے جوہری معاہدے پر دستخط کرنے والے یورپی ملکوں نے ایران کو کچھ نہیں دیا۔ ایران یورینیم کی افزدوگی کی مجاز حد سے تجاوز کرنے پر مجبور ہے۔ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ویانا اجلاس میں ایران کے منصفانہ مطالبات تسلیم نہیں کیے گئے ہیں۔ اس لیے ایران یورینیم کی افزدوگی کی مقدار 300 کلو گرام سے بڑھانے پر مجبور ہے۔ہفتے کے روز 7 یورپی ملکوں آسٹریا، بیلجیم، فن لینڈ، ہالینڈ، سلوینیا، اسپین اور سویڈن نے ویانا میں ہونے والے اجلاس میں شرکت کی۔ ان ملکوں نے ایران کے ساتھ جوہری سمجھوتے کو برقرار رکھنے اور اس کی تمام شرائط پر عمل درآمد پر زور دیا۔یورپی ممالک نے اعتراف کیا کہ ایران کے ساتھ کئے گئے معاہدے کے معاشی پہلوئوں پر عمل درآمد میں مشکلات پیش آ رہی ہیں۔ یورپی ملکوں کا کہنا ہے کہ وہ فرانس، برطانیہ اور جرمنی کے علاوہ یورپی یونین خارجہ امور کے ساتھ مل کر ایران کے ساتھ آئینی حدود میں تجارت کے لیے اقدامات کرے گا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *