دو نابالغ لڑکیوں کی اجتماعی آبروریزی، ملزمین کو گرفتار کرنے گئی پولیس ٹیم پر حملہ

Share Article
rape

بہارکے ضلع گیا میں اتری تھانہ حلقہ کے راولا گاؤں کی دو نابالغ لڑکیوں کے ساتھ گینگ ریپ کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ دونابالغ لڑکیوں کوپاس کے ہی گاؤں کے پانچ-چھ لوگوں نے بدھ کی رات اغواکرکے ان کے ساتھ گینگ ریپ کیا۔ملزمین ضلع نوادہ کے ہسووا تھانہ علاقے کے ہدسہ گاؤں کے باشندے ہیں۔اتری تھانہ کے ایس ایچ اورنجن چودھری کی قیادت میں پولس اہلکارملزموں کوگرفتارکرنے کیلئے بدھ کی رات ہدسہ گاؤں گئی جہاں ملزموں اوران کے ساتھیوں نے پولس پرہی حملہ کردیا۔بتایاجارہاہے کہ گاؤں کی سنسنان فلاوورمل میں پولس اہلکارکویرغمال بناکرمارپیٹ کی۔ تھانہ انچارج رنجن چودھری بھی زخمی ہو گئے۔ انہیں علاج کے لئے پٹنہ ریفر کر دیا گیا ہے۔

ایس ایس پی راجیو مشرا نے بتایا کہ عصمت ریزی کی واردات کی اطلاع ملنے کے بعد اتری تھانہ کے انچارج رنجن چودھری کی قیادت میں چھاپے ماری کی گئی۔اس دوران وہاں کے لوگوں نے پولیس اہل کاروں پر حملہ کیا۔ جس میں رنجن چودھری زخمی ہو گئے۔ بہتر علاج کے لئے انہیں پٹنہ میں منتقل کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ متاثرہ لڑکیوں نے اپنے بیان میں بتایاکہ ان کے ساتھ گینگ ریپ کیاگیاہیپہلے انکو اغویٰ کیا گیا پھرا ن کی اجتماعی آبروریزی کی گئی۔ایس ایس پی نے بتایا کہ پاکسو قانون کے تحت کاروائی کی جائیگی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *