جنگ ہوئی تو ایران اسرائیل پر بمباری کی اہلیت رکھتا ہے: حسن نصر اللہ

Share Article

 

خلیج میں امریکہ اور ایران کے درمیان چل رہی کشیدگی اور جنگ کے حالات کے پیش نظر لبنان کے حسن نصر اللہ نے ایک بیان جاری کیا ہے ۔ جس میں انہوں نے یہ واضح کیا ہے کہ جنگ کے حالات پیدا ہوئے تو ایران اسرائیل کو نشانہ بنانے پر قادر ہے ۔ذرائع کے مطابق لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے سربراہ حسن نصر اللہ نے کہا ہے ’’کہ ایران اور امریکہ کے درمیان جنگ چھڑنے کے بعد امریکی اتحادی اسرائیل’غیر جانبدار‘ نہیں رہے گا۔‘‘

Image result for iran nuclear weapons

حزب اللہ کے زیر انتظام عربی زبان میں نشریات پیش کرنے والے ’’المنار‘‘ سیٹلائیٹ ٹی وی چینل پر نشر ہونے والے خصوصی انٹرویو میں حسن نصر اللہ نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ’’ایران، اسرائیل پر پوری طاقت اور خوںخاری سے بمباری کی صلاحیت رکھتا ہے۔‘‘حسن نصر اللہ کا یہ تبصرہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب امریکا اور ایران کے درمیان کشیدگی عروج پر ہے اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اسلامی جمہوریہ کے خلاف لفظی جنگ کو مزید ہوا دے رکھی ہے۔

 

Image result for iran nuclear weapons

حزب اللہ کے رہنما نے کہا کہ’’امریکیوں کو جب یہ بات سمجھ آتی ہو کہ یہ جنگ اسرائیل کا صفایہ کر سکتی ہے، تو وہ ایسی جنگ کے بارے میں کئی مرتبہ سوچیں گے۔‘‘ انھوں نے کہا کہ خطے میں ایران کے خلاف امریکی جنگ روکنا ہماری اجتماعی ذمہ داری ہے۔امریکہ، حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم گردانتا ہے۔ لبنان میں 1975-1990 کے درمیان ہونے والی خانہ جنگی کے بعد سے حزب اللہ واحد ایسی تنظیم ہے، جسے داخلی لڑائی کے بعد غیر مسلح نہیں کیا گیا۔

 

Image result for iran nuclear weapons

بحر متوسطہ کے ساحل پر واقع چھوٹے سے ملک لبنان میں حزب اللہ ایک بڑی با اثر سیاسی تنظیم ہے۔ گذشتہ برس ہونے والے انتخابات میں اسے 128 رکنی پارلیمنٹ کی 13 نشستوں پر کامیابی ملی جبکہ موجودہ کابینہ میں اس کے تین وزیر بھی ہیں

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *