وزیر اعظم نے دنیا کو دیا ماحول بچانے کا منتر

Share Article
The Prime Minister has given the world the mantra of saving the environment

 

۔ بھارتی ثقافت میں زمین کی اہمیت ماں کی مانند: مودی
۔ وزیر اعظم نے گلوبل واٹر ایجنڈا پر دیا زور
۔ دنیا میں بڑھتے سحراسے بچنا ہے پروگرام کا مقصد

بھارت میں زمین کی اہمیت کا اندازہ اسی بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ہماری ثقافت میں زمین کو ماں مانا گیا ہے۔ بھارت کے لوگ علی الصبح زمین پر پاؤں رکھنے سے پہلے دعا کرتے ہیں۔ بھارت ماحولیاتی تحفظ کے مسئلے پر کافی سنجیدہ ہے اور مسلسل اس سمت میں اپنی کوششوں میںمصروفبھی ہے۔ اس درمیان ایک قرارداد کے تحت بھارت 2030 تک 21 ملین ہیکٹیئر سے لے کر 26 ملین ہیکٹیئر کی بنجر زمین کو زرخیز کرے گا۔

یہ باتیں وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کے روز گریٹر نوئیڈا کے ایکسپو مارٹ میں چل رہے 12 روزہ کاپ -14 کانفرنس کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔ اس پروگرام میں دنیا کے 190 سے زائد ممالک کے نمائندے شرکت کر رہے ہیں۔ اس میں زمین پر موسمیاتی تبدیلی، تباہ ہوتا حیاتیاتی تنوع، ریگستان جیسے بڑھتے خطرات سے نمٹنے کو لے کرغور وخوض چل رہا ہے۔ وزیر اعظم نے اپنے خطاب میں گلوبل واٹرایجنڈا پر زور دیتے ہوئے کہا کہ آج دنیا میں پانی کا مسئلہ سنگین صورت اختیار کر گیا ہے۔ ایسے میں پانی کو بچانے کی سمت میں عالمی سطح پر ایک سیمینار بلانے کی ضرورت ہے جہاں اس مسئلہ کا حل نکالا جا سکے۔ بھارت نے پانی کے تحفظ، پانی کا صحیح استعمال کرنے کی طرف اپنا قدم بڑھا دیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ بھارت نے گرین کور (درختوں کی تعداد) کو فروغ دیا ہے۔ اسی کا نتیجہ ہے کہ بھارت میں جنگلات رقبہآشاریہ آٹھ ملین ہیکٹیئر بڑھا ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ دنیا بھر میں لوگ موسمیاتی تبدیلی کے مسئلے پر منفی سوچ کے ساتھ رہ رہے ہیں۔ اسی وجہ سے سمندروں کے پانی کی سطح بڑھ رہی ہے۔ بارش-سیلاب اور طوفان کا اثر ہر جگہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ ایسے میں انہیں مثبت سمت میں متحد کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے اس مسئلے پر تین بڑے پروگراموں کا اہتمام کیا ہے، اس سے ہماری کوششوں کے بارے میں دنیا کو پتہ لگتا ہے۔ بھارت موسمیاتی تبدیلی،حیاتیاتی تنوع اور زمین کے کٹاؤ کے مسئلہ پرکئی اقدامات کرنے کو تیار ہے۔ پی ایم مودی نے کہا کہ ہماری حکومت کسانوں کی آمدنی دوگنا کرنے کی طرف بڑھ رہی ہے۔ اس کے تحت مختلف طریقے سے کاشت سکھائی جا رہی ہے۔ پانی کے مسئلے کو لے کر ہم نے مختلف وزارت بنائی ہے تاکہ تمام کو حل کیا جا سکے۔ آنے والے دنوں میں سنگل یوز پلاسٹک پر پابندی عائد کرنے کی منصوبہ بندی ہے۔ ہم نے ہی نامیاتی کھاد کو فروغ دیا ہے۔ ہم ’پرڈراپ مور کراپ‘کی پالیسی پر کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے اعلان کیا کہ بھارت آنے والے وقت میں بنجر زمین کو زرخیز بنانے کی طرف قدم بڑھائے گا۔

بھارت 21 ملین ہیکٹیئر سے لے کر 26 ملین ہیکٹیئر کی بنجر زمین کو 2030 تک زرخیز بنائے گا۔ اس دوران سینٹ ونسینٹ اور گرینیڈائنس کے وزیر اعظم رالف گونسالویس نے وزیر اعظم مودی کے کوششوں کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ آج ماحولیاتی تحفظ کو لے کر بھارت جیسے مضبوط ملک کا ساتھ ملنے سے ہماری کوششوں کوفروغ ملا ہے۔

اس سے پہلے مرکزی وزیر ماحولیات پرکاش جاوڈیکر نے موسمیاتی تبدیلی کے معاملے پر بھارت کی طرف سے اٹھائے جا رہے اقدامات کی معلومات دی۔ انہوں نے بتایا کہ بھارت نے بڑھتی ہوئی گلوبل وارمنگ اور آلودگی سے نمٹنے کے لئے ای-گاڑیوں کو فروغ دیا ہے۔ ماحولیاتی تحفظ کو لے کر حکومت ہندمسلسل کوشش کر رہی ہے اور لوگوں کو بھی بیدار کرنے میں لگی ہے۔ وہیں شیروں کی تعداد کا ذکر کرتے ہوئے جاوڈیکر نے کہا کہ دنیا کے 77 فیصد شیر صرف بھارت میں ہیں، جو ہمارے لئے فخر کی بات ہے۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ ہماری حکومت نے پانی کے تحفظ کے لئے الگ سے وزارت بھی تشکیل دی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ دنیا کو بڑھتے سحرا سے بچانے کی مہم (اقوام متحدہ کنونشن ٹو کمبیٹ ڈیزرٹیفکیشن) کے تحت منعقد ہونے والا یہ 14 واں اجلاس ہے۔ اس بار بھارت اس پروگرام کی میزبانی کر رہا ہے۔ اس کانفرنس میں ابھی تک دنیا بھر کے سائنسداں اپنے اپنے ممالک کے مسائل اور اس سے نمٹنے کے حوالے سے اٹھائے گئے اقدامات کا اشتراک کر چکے ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *