مہاراشٹر میں ملک کے جمہوری اقدار اور اصولوں کا قتل: عآپ

 

مہاراشٹر میں بی جے پی اور این سی پی کی حکومت پر عام آدمی پارٹی (عآپ) نے اسے جمہوری اقدار اور اصولوں کا قتل قرار دیا ہے۔

عآپ کے راجیہ سبھا رکن سنجے سنگھ نے آج کہا کہ رات کے اندھیرے میں جو مہاراشٹر میں سیاہ کارنامہ ہوا ہے، وہ اس ملک کے جمہوی ا قدار اوراصولوں کے قتل کی کارروائی ہے جو راج بھون سے کی گئی ہے۔ راج بھون آج راجہ بھون میں تبدیل ہوتا جا رہا ہے۔ بدقسمتی سے کہنا پڑ رہا ہے کہ ملک میں گورنر کا کردار دربان کا ہو گیا ہے، جو اقتدار کی سلامی بجانے کا کام کر رہے ہیں۔

Image result for maharashtra new government
سنجے سنگھ نے سوالیہ لہجے میں کہا، “جب مہاراشٹر میں گورنر موصوف نے صدر راج لگایا تھا تو صدر راج منسوخ کب کیا گیا؟ اور نئی حکومت بنانے کا عمل شروع کب کیاگیا؟ ’’انہوں نے مزید کہا کہ جس شخص کو حلف دلایا گیا وہ خود کہہ رہا ہے کہ اس کے پاس صرف 22 ممبران اسمبلی کی حمایت ہے۔ اگر بی جے پی کے 105 اور 22 ممبران اسمبلی کو ملا دیا جائے تب بھی یہ تعداد 127 ہوتی ہے۔ اکثریت نہ ہوتے ہوئے بھی وزیر اعلیٰ اور نائب وزیر اعلیٰ کا حلف دلاتے کہیں سیاسی پارٹیوں میں توڑ پھوڑ کرنے کی کوشش ہے۔

Image result for maharashtra new government
قابل ذکر ہے کہ مہاراشٹر میں ہفتہ کی صبح صبح ہندوستانی سیاست کا سب سے بڑا الٹ پھیر دیکھنے کو ملا۔ بی جے پی نے این سی پی لیڈر اجیت پوار کے ساتھ مل کر حکومت بنا لی۔ گورنر بھگت سنگھ کوشیاری نے دیویندر فڑنویس کو وزیر اعلیٰ کے عہدے کا حلف دلایا۔ اجیت پوار کو نائب وزیر اعلیٰ کا عہدہ ملا ہے۔ اس سے پہلے جمعہ کی شام تک شیوسینا، کانگریس اور این سی پی مل کر حکومت بنانے کی طرف آگے بڑھ رہے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *