2016 میں ہوئی تھی پہلی سرجیکل اسٹرائک، سیاسی جماعتوں کا اپنا اندازہ: فوج

Share Article

 

کشمیر میں دہشت گردوں کا صفایا کرنے کے لئے فوج کی جانب سے آپریشن آل آئوٹ چلایا گیا تھا، جس کے تحت ابھی تک 250 سے دہشت گردوں کو مارا جا چکا ہے. سیکورٹی فورسز مسلسل دہشت گردوں کے خلاف ایکشن لے رہی ہے اور یہی وجہ ہے کہ دہشت گرد بوکھلا رہے ہیں۔

 

کشمیر میں دہشت گردوں کے خاتمے کے لئے سیکورٹی فورس مکمل طور پر ایکشن موڈ میں ہے. جس کا اثر ابھی نظر آنا شروع ہو گیا ہے. پیر کو نارتھ آرمی کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل رنبیر سنگھ نے میڈیا سے بتایا کہ گزشتہ سال وادی میں 270 نوجوانوں نے دہشت گرد تنظیموں کو جوائن کیا تھا، لیکن اس سال ابھی تک یہ تعداد 40 تک ہی پہنچا ہے. ایسے میں اگر تناسب کے حساب سے دیکھیں تو اس بار نمایاں کمی آئی ہے.

 

سرجیکل اسٹرائک کے مسئلہ پر انہوں نے کہا کہ ایک RTI کے جواب میں بتایا گیا تھا کہ ستمبر، 2016 میں پہلی سرجیکل اسٹرائک ہوئی تھی. لیکن وہ اپنی طرف سے اس پر کچھ نہیں کہیں گے، اس پر فیصلہ حکومت کو کرنا ہے کہ کب کس آپریشن کے بارے میں بتایا جائے گا. سیاسی پارٹی اپنے حساب سے بیان دیتے رہتے ہیں.

 

بالاكوٹ میں کی گئی ایئراسٹراك کے معاملے پر انہوں نے کہا کہ ہماری فضائیہ کے کی طرف سے کئے گئے حملے سے دہشت گردوں کے انفراسٹرکچر کو بڑی چوٹ پہنچی ہے، جو ایک کامیابی ہے. انہوں نے بتایا کہ اس سے بوکھلا کر ہی پاکستان نے جواب دیا تھا لیکن ہندوستان نے اسے منہ توڑ جواب دیا۔

 

سکیورٹی کے مطابق ابھی تک اس سال کل 86 دہشت گردوں کو مارا گیا ہے. جبکہ کئی دہشت گردوں کو واپس مین اسٹريم میں لایا جا چکا ہے.

رنبیر سنگھ نے بتایا کہ پاکستان کی سرحد کی جانب سے مسلسل مداخلت کم ہو رہی ہے اسی وجہ سے دہشت گردوں کو کوشش ہے کہ کشمیری نوجوان دہشت گرد تنظیموں اپنائیں.

آپ کو بتا دیں کہ کشمیر میں دہشت گردوں کا صفایا کرنے کے لئے فوج کی جانب سے آپریشن آل آئوٹ چلایا گیا تھا، جس کے تحت ابھی تک 250 سے دہشت گردوں کو مارا جا چکا ہے. سیکورٹی فورسز مسلسل دہشت گردوں کے خلاف ایکشن لے رہی ہے اور یہی وجہ ہے کہ دہشت گرد بوکھلا رہے ہیں۔

 

مسلسل حملے کے لئے حکمت عملی بنا رہے ہیں دہشت گرد
گزشتہ چند دنوں میں دہشت گردوں نے وادی میں سیکورٹی فورسز کے قافلوں کو نشانہ بنایا ہے. اس کے علاوہ کچھ ہی دنوں پہلے ایک انتباہات بھی آیا تھا، جس میں بتایا گیا تھا کہ دہشت گرد سری نگر اور ائیر بیس کو نشانہ بنا سکتے ہیں.
14 مئی کو ہی پلوامہ میں وادی کے چار بڑے دہشت گردوں نے ایک اجلاس کی تھی، جس میں دہشت گردانہ حملے پلاننگ کی گئی تھی. اس اجلاس میں حزب دہشت گرد ریاض نايكو، جیش محمد زاہد منظور، لشکر دہشت گرد ریاض ڈار کے علاوہ غیر ملکی دہشت گرد بھی شامل تھا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *