سی بی آئی تنازع پرسرکارکی صفائی

Share Article
arun
سی بی آئی میں رشوت معاملے کے بعد اندروانی اختلاف کے پیش نظر مودی سرکار نے آج بڑی کارروائی کی ہے۔دراصل مرکزی جانچ بیورو (سی بی آئی)میں اندروانی اختلاف کے پیش نظر حکومت نے جانچ ایجنسی کے ڈائریکٹر آلوک ورما اور اسپیشل ڈائرکٹر راکیش استھانا کو چھٹی پر بھیج دیا گیاہے۔ وہیں جوائنٹ ڈائریکٹر ایم ناگیشور راؤ کو فوری طور پر عبوری ڈائرکٹر مقرر کر دیا ہے۔اس معاملے پراپوزیشن کے حملے کے بعد وزیرخزانہ ارون جیٹلی نے کہاکہ ’’سرکار نے اس معاملے پرجوبھی حکم یاہے وہ سی وی سی کی سفارشوں پردیاہے۔اس پورے معاملے پر اپوزیشن کے الزام بکواس ہیں، کیا اپوزیشن کو معلوم ہے سی بی آئی میں کیا ہورہاہے؟‘‘۔ارون جیٹلی نے کہاکہ ’’سینٹرل وجلینس کمیشن(سی وی سی) کے پاس سارا دونوں کے الزاموں کا مٹیریل ہے۔ کل سی وی سی نے اپنی میٹنگ میں یہ سفارش کی ان الزامات کی جانچ نہ یہ دونوں الزام لگانے والے افسرکرسکتے ہیں، نہ ہی ان کی نگرانی میں کوئی ٹیم کرسکتی ہے۔ اسلئے جب تک اس معاملے کی جانچ ہوگی تب معاملے کوغیرجانبدارانہ بنائے رکھنے کیلئے ان دونوں افسروں کوچھٹی پر بھیج دیاگیاہے۔اسلئے ایس آئی ٹی تشکیل کی گئی ہے جوان دونوں الزام لگانے والے افسروں کے تحت نہیں ہے‘‘۔
مرکزی کابینہ کی میٹنگ کے بعد وزیرخزانہ ارون جیٹلی نے کہاکہ ’’ مرکزی جانچ ایجنسی اس ملک پریمئرجانچ ایجنسی ہے۔ اسلئے اس کی آئینی صداقت کوبرقراررکھنا چاہئے۔ سی بی آئی کی تاریخی شبیہ ہے کہ جب ملک میں کوئی بڑا معاملہ آتاہے توکہتے ہیں کہ اس کی سی بی آئی جانچ ہونی چاہئے۔آج عجیب اوربدقسمتی کی صورتحال ہے۔سی بی آئی کے دوبڑے افسرڈائریکٹر اوراسپیشل ڈائریکٹر ایک دوسرے پرالزام لگارہے ہیں۔سرکار اس معاملے کی جانچ نہیں کرسکتی ۔سی بی آئی ایکٹ کے مطابق سی وی سی اس معاملے کی جانچ کرسکتاہے۔یہ ان قوانتین کے سلسلے میں ہیں، وہ معاملے جوبدعنوانی سے جڑے ہیں۔‘‘
اب آلوک ورما اس معاملے کولیکر سپریم کورٹ چلے گئے ہیں۔سپریم کورٹ نے آلوک ورما کی عرضی کومنظورکرلیاہے اوراس پرجمعہ کوسماعت ہوسکتی ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *