مہاراشٹر میں حکومت بنانے کے خلاف دائر درخواست پر جلد سماعت سے انکار
شیوسینا، این سی پی اور کانگریس اتحاد کو سپریم کورٹ سے بڑی راحت ملی ہے۔ شیوسینا، این سی پی اور کانگریس کے ذریعہمہاراشٹر میں حکومت بنانے کے خلاف دائر درخواست پر سپریم کورٹ نے جلد سماعت سے انکار کر دیا ہے۔ کورٹ نے کہا کہ اس معاملے میں جلد سماعت کی ضرورت نہیں ہے۔
مہاراشٹر کے باشندے سریندر اندربہادر سنگھ نے عرضی دائر کر کہا ہے کہ مہاراشٹر کے عوام نے بی جے پی-شیوسینا اتحاد کی حمایت میں ووٹ دیا تھا۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ کورٹ مہاراشٹر کے گورنر کو ہدایت دے کہ وہ شیوسینا، کانگریس اور این سی پی کے انتخابات کے بعد اتحاد کو حکومت بنانے کے لئے مدعو نہیں کریں۔ شیوسینا کی قیادت والے انتخابات کے بعد اتحاد کو حکومت بنانے کے لئے مدعو کرنا مینڈیٹ کی توہین ہوگی۔
شیوسینا، کانگریس اور این سی پی کے اتحاد کے خلاف سپریم کورٹ میں ایک اور درخواست دائر کی گئی ہے۔ آل انڈیا ہندو مہاسبھا کے رہنما پرمود جوشی نے سپریم کورٹ میں عرضی داخل کر کہا ہے کہ شیوسینا، این سی پی اور کانگریس کے درمیان انتخابات کے نتائج کے بعد کا اتحاد غیر آئینی ہے۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ اس اتحاد سے وزیر اعلیٰ نہ بننے دیا جائے۔
گزشتہ 26 نومبر کو سپریم کورٹ نے 27 نومبر کو فلور ٹیسٹ کرانے کا حکم دیا تھا لیکن فلور ٹیسٹ کرانے سے پہلے ہی دیویندر فڑنویس اور اجیت پوار نے استعفی دے دیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here