انل امبانی کو لگا جھٹکا، 4 ہفتوں میں ادا کرنے ہوں گے 453 کروڑ، نہیں تو ہوگی جیل

Share Article
anil-ambani
نئی دہلی: سپریم کورٹ نے ایرکسن(Ericsson )معاملے میں انل امبانی اور ان کی کمپنی کے دو ڈائریکٹرس کو توہین کا مجرم قرار دیا ہے۔کورٹ نے انل امبانی کو چار ہفتے کے اندر اندرایرکسن کو 453 کروڑ روپے ادا کرنے کو کہا ہے۔
دراصل، سپریم کورٹ نے ایرکسن انڈیا کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے نہ صرف انل امبانی بلکہ آرکوم کے دو ڈائریکٹروں کو توہین کا مجرم قرار دیا ہے۔ساتھ ہی کورٹ نے کہا کہ اگر چار ہفتوں Ericsson کو 453 کروڑ ادا نہیں کیا جاتا ہے تو انل امبانی کو جیل جانا پڑ سکتا ہے۔550 کروڑ روپے کی بقایا رقم کی ادائیگی کے لئے Ericsson انڈیا کی جانب سے سپریم کورٹ میں عرضی دائر کی گئی تھی۔
سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ اگر طے وقت کی حد کے اندر ایرکسن انڈیا کو ادا نہیں کیا گیا تو انل امبانی اور ان کی کمپنی کے دونو ں ڈائریکٹر کو تین -تین مہینیکی سزا سنائی جائے گی۔ ساتھ ہی عدالت نے ان تینوں کو توہین کا مجرم قرار دیتے ہوئے ایک- ایک کروڑ روپے کا جرمانہ بھی عائد کیا ہے۔وہیں جرمانے کی رقم نہ جمع کروانے کی صورت میں انہیں 1 ماہ کی جیل کی سزا بھگتنی ہوگی۔ بتایا جا رہا ہے کہ ایرکسن ادائیگی معاملے میں جن دو ڈائریکٹروں پر سپریم کورٹ نے ڈنڈا چلایا ہے ان کے نام ستیش سیٹھ اور چھایہ ورانی بتائے جا رہے ہیں۔ ستیش سیٹھ، ریلائنس ٹیلی کام کے چیئرمین ہیں تو چھایہ ورانی ریلائنس انفراٹیل کی چیئرمین ہیں۔بتادیں کہ اس سے پہلے ایرکسن انڈیا کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ کی بنچ نے 13 فروری کو اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *