سپریم کورٹ کا رام مندر پر روزانہ سماعت کا فیصلہ خوش آئند: وی ایچ پی

Share Article

 

وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے ایودھیا رام مندر معاملے میں سپریم کورٹ کی طرف سے ثالثوں کی رپورٹ میں خاص پیش رفت نہیں دکھائی دینے پر روزانہ سماعت کرنے کے فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے۔

 

وی ایچ پی کے بین الاقوامی ایگزیکٹو چیئرمین آلوک کمار نے جمعرات کو کہا کہ ایودھیا رام مندر معاملے میں ایک فریق کی عرضی پر سپریم کورٹ نے ثالثی پینل کو 18 جولائی تک اپنی رپورٹ سونپنے کو کہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ اگر اس رپورٹ میں کوئی خاص پیش رفت نہیں نظر آئی تو وہ 25 جولائی سے روزانہ معاملے کی سماعت کرے گا۔ آلوک نے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ یہ اچھی خبر ہے اور امید ہے کہ فیصلہ جلد آئے گا۔

Image result for VHP

وی ایچ پی کے قومی ترجمان ونود بنسل نے کہا کہ رام مندر پر فیصلے میں وہی لوگ رخنہ ڈال رہے ہیں جنہیں معلوم ہے کہ فیصلہ رام مندر کے حق میں ہی آنا ہے۔ کبھی اسماعیل فاروقی تو کبھی ججوں کی تعداد، کبھی ترجمہ تو کبھی ثالثی اور کبھی چیف جسٹس پر مواخذے۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ عدالت کے فیصلے کا انتظار کرنے کی بات کرتے ہیں وہ ہی اس کی سماعت نہیں ہونے دے رہے ہیں۔ اصل میں ان کے لئے یہ محض ایک زمین کا ٹکڑا ہے جو ہمارے لئے جگر کا ٹکڑا ہے۔

 

بنسل نے کہا کہ شری رام جنم بھومی کی ایک ایک انچ ہمارے لئے دیو بھومی، پتربھوم ہے۔ اس کی نہ منتقلی ہو سکتی ہے اور نہ ہی کوئی تقسیم۔ تمام زمین رام کی ہے تو ثالثی کس کام کی۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پہلے ہی دن کہا تھا ثالثی سے کوئی نتائج نہیں نکلنے والا ہے۔ آخر وہی ہوا سپریم کورٹ نے آج ثالثی پینل کو 18 جولائی تک اپنی رپورٹ دینے کے ساتھ رام مندر پر اگلی سماعت 25 جولائی کو کرنے کا فیصلہ دیا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *