ای وی ایم – وی وی پیٹ معاملے میں 21اپوزیشن پارٹیوں کوسپریم کورٹ سے جھٹکا

Share Article

الیکٹرونک ووٹنگ مشین(ای وی ایم)-ووٹنگ ویریفائیڈ پیپرس آڈٹ ٹریل(وی وی پیٹ)معاملے میں اپوزیشن کے 21 پارٹیوں کوآج سپریم کورٹ سے جھٹکا لگا ہے۔کورٹ نے 50 فیصدای وی ایم اور وی وی پیٹ پرچیوں کی ملان(ملاپ) کی نظر ثانی کی درخواست خارج کردیاہے۔کورٹ نے وی وی پیٹ پرچیوں کے اچانک ملاپ کو لے کر دائر جائزہ پٹیشن کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ عدالت اپنے حکم کو تبدیل کرنے کے لیے تیار نہیں ہیں۔

سپریم کورٹ نے ای وی ایم سے پڑے ووٹوں کی وی وی پیٹ پرچی کو ملانے کے معاملے میں 21 اپوزیشن پارٹیوں کی نظر ثانی عرضی منگل کو خارج کردی۔چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی صدارت والی بینچ نے تیلگو دیشم پارٹی کے سربراہ این چندربابو نائیڈو اور 20 دیگر پارٹیوں کے لیڈروں کی جانب سے دائر نظر ثانی کی عرضی یہ کہتے ہوئے خارج کر دیا کہ اسے اپنے حکم پر پھر سے غور کرنے کی کوئی ضرورت محسوس نہیں ہو رہی ہے۔

آندھراپردیش کے وزیراعلی و تلگودیشم کے قومی صدر این چندرابابونائیڈو نے کہا نے اس مسئلہ پر عدالت عظمی کی جانب سے عرضی کو مسترد کردیئے جانے کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا ”ہم عدالت کے فیصلہ کا احترا م کرتے ہیں۔ انتخابی عمل میں شفافیت کا ہم مطالبہ کرتے ہیں“۔ این چندرابابونائیڈو نے کہا ہے کہ کم از کم 50فیصد ای وی ایم پیپر ٹرائل مشینوں کی گنتی سے متعلق 21 اپوزیشن جماعتوں کی نظر ثانی عرضی سپریم کورٹ نے مسترد کردی ہے۔ تاہم اس مسئلہ پر اپوزیشن جماعتوں کی جدوجہد جاری رہے گی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *