مدھیہ پردیش میں بی جے پی کے دو اراکین اسمبلی کی کراس ووٹنگ، سندھیا نے خیر مقدم کیا

Share Article

مدھیہ پردیش اسمبلی میں بدھ کوایک ترمیمی بل پرووٹنگ میں ڈرامائی طریقے سے بی جے پی کے دو ممبران اسمبلی نارائن ترپاٹھی (میہر) شرد کول (بیوہاری) کی جانب کانگریس کے حق میںکراس ووٹنگ کرنے سے جہاں بی جے پی کو جھٹکا لگا ہے وہیں دو ممبران اسمبلی کو توڑکر اپنے ساتھ لانے میں کامیابی حاصل کر کے کانگریس خوش ہو رہی ہے۔ سی ایم کمل ناتھ کے حق میں ووٹنگ کرنے والے بی جے پی لیڈروں کو کانگریس لیڈر جیوتی رادتیہ سندھیا نے ٹویٹ کرکے گھر واپسی کی مبارک باد دی ہے۔ ساتھ ہی کہا ہے کہ بی جے پی ممبران اسمبلی نے کانگریس کے حق میں ووٹ دے حکومت کی پالیسیوں سے اتفاق کیا ہے اور بار بار اقلیتی حکومت کہنے والے بی جے پی کے رہنماؤں کو آئینہ بھی دکھایا ہے۔

 

بدھ کی رات جیوتی رادتیہ سندھیا نے اپنے ٹوئٹر کے اکاؤنٹ پر دونوں بی جے پی ممبران اسمبلی کو مبارکباد دیتے ہوئے لکھا ’مدھیہ پردیش اسمبلی میں آج سزا ترمیمی بل پرووٹنگ میں بی جے پی کے دو ممبران اسمبلی نارائن ترپاٹھی اور شرد کول نے کانگریس کے حق میں ووٹ دے کرحکومت کی پالیسیوں سے اتفاق کیا ہے۔ ساتھ ہی بار بار اقلیتی حکومت کہنے والے بی جے پی کے رہنماؤں کو آئینہ بھی دکھایا ہے۔ آپ دونوں کوگھر’واپسی‘ پر دل سے مبارک باد۔ مجھے پورا یقین ہے کہ ہماری حکومت مضبوطی سے اپنے ترقیاتی کاموں کو آگے بڑھائے گی۔

 

قابل ذکر ہے کہ بدھ کو مدھیہ پردیش اسمبلی میں گئو-رکشا کے نام پر جرم کر رہے لوگوں پر لگام کسنیگئو کشی انسداد ترمیمی بل 2019 پیش کیا۔ اس دوران ایوان میں موجود بی جے پی ممبر اسمبلی نارائن ترپاٹھی اور ممبر اسمبلی شرد کول نے نہ صرف کراس ووٹنگ کی بلکہ وزیر اعلی کمل ناتھ کے حق میں بیان بھی دیا۔ دونوں ممبران اسمبلی نے کمل ناتھ کو وکاس پرش بتاتے ہوئے اپنیحمایت دینے کی بات کہی ہے۔ یہ دونوں ہی ممبر ان اسمبلی پہلے کانگریس میں تھے، لیکن انتخابات کے وقت بی جے پی کا دامن تھام لیا تھا اور ٹکٹ لے کر انتخابات جیتا تھا۔ اب دونوں ہی ممبر ان اسمبلی پھر سے کانگریس میں واپسی کرنے کی راہ پر ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *