دہلی کانگریس کی کمان ملنے کے امکان پر شاٹگن نے توڑ ی خاموشی، جانیے کیا کہا

 

نئی دہلی / پٹنہ۔ شیلا دکشت کے بعد سے دہلی کانگریس میں صدر کے عہدے کے لئے ہر روز قیاس آرائی کا دور چل رہا ہے۔ کئی ناموں کے درمیان ایک بہاری بابو بھی دوڑ میں شامل ہیں۔ شاٹگن نے ان امکانات پر بھی اپنی خاموشی توڑتے ہوئے اپنے ہی انداز میں جواب دیا ہے۔

ایسا امکان ہے کہ لوک سبھا انتخابات سے پہلے بی جے پی سے ناطہ توڑ کانگریس میں شامل ہونے والے فلم اداکار شتروگھن سنہا کو دہلی کانگریس کی کمان سونپی جا سکتی ہے۔ بہاری پس منظر، منطقی اور بااثر آواز ہونے کی وجہ سے شتروگھن امکان دیگر دعویداروں پر بھاری پڑ رہی ہے۔

کانگریس میں دہلی سمیت کئی علاقوں میں نئے صدر کی بحث قریب ہفتے بھر سے چل رہی ہے۔ خود شتروگھن سنہا بھی تسلیم کرتے ہیں کہ ایسی بات چیت سے وہ بھی واقف ہیں۔ اگرچہ سرکاری طور پر انہیں ابھی تک کچھ نہیں بولا گیا ہے۔ پھر بھی وہ نئی ذمہ داری کے لئے خود کو تیار بتاتے ہیں۔

بقول شتروگھن، اگر پارٹی قیادت مجھے اس قابل سمجھتا ہے تو میں بھی پیچھے نہیں هٹوںگا، کیونکہ میں جس پارٹی سے منسلک ہوں، اس کے سب سے اوپر کی قیادت کے ہر حکم کو ایمانداری سے نبھانا میرا فرض ہوگا۔ شتروگھن نے کہا کہ پارٹی کی توقعات پر میں کتنا کھڑا اتر پاؤں گا یہ تو وقت بتائے گا، لیکن میرے بارے میں بحث کے لئے بھی میں سب کا شکرگزار ہوں۔ اگر میں قابل ہوں اور پارٹی کو میری ضرورت ہے تو میں ایک سپاہی کی طرح بہتر کرنے کی کوشش کروں گا۔ یہ میرے لئے خوش قسمتی بھی ہوگا۔

شیلا دکشت کے انتقال کے بعد خالی ہوئی دہلی پردیش کانگریس صدر کے عہدے کے دعویداروں میں شتروگھن سب سے آگے بتائے جا رہے ہیں۔ اس کی وجہ بھی ہے۔دہلی میں بہار اور اتر پردیش کے لوگوں کی تعداد زیادہ ہے۔ شتروگھن خود بھی دہلی سے بی جے پی کے ٹکٹ پر لوک سبھا کا الیکشن لڑ چکے ہیں۔ اگرچہ وہ ہار گئے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *