کانگریس سے ہاتھ ملاتے ہی شرو نے کہا، BJP ہے ’ون مین شو‘ ’2 مین آرمی‘ والی پارٹی

Share Article
shatru

کانگریس میں شامل ہوتے ہی BJP اور مودی حکومت پر شتروگھن سنہا نے جم کر نشانہ سادھا۔ دشمن نے کہا، ونمین شو اور 2 مین آرمی کی حکومت میں سارا کام پی ایم او سے ہوتا ہے۔ BJP سے میں نے کبھی اپنے لئے کچھ نہیں مانگا، پھر بھی پارٹی نے مجھے درکنار کیا۔ پارٹی کے لوگ 100۔100 اسمارٹ سٹی کی بات کرتے ہیں لیکن ایک تو دکھائیں ڈھنگسے۔

شتروگھن سنہا۔ بی جے پی میں ہمیشہ ہی کہا گیا ہے کہ یہ ڈائیلاگزکی پارٹی ہے، لیکن کس کے ساتھ ڈائیلاگ ہوا؟ لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی، یشونت سنہا، یہاں تک کہ میرے ساتھ بھی بات چیت نہیں ہوئی۔ ہزاروں کروڑ روپیہ تشہیر پر ہماری پارٹی نے خرچ کیا، لیکن یہی پیسہ اگر بے روزگاری کی کسی یوجنا میں لگایا گیا ہوتا تو ملک کی ترقی ہوتی۔

نوٹ بندی کے مشکلات سے ملک گزر ہی رہا تھا اس وقت تک آپ نے ایک اور اعلان کر دیا جی ایس ٹی ،جس کی وجہ سے غریب لوگوں کی اور کمر ٹوٹ گئی۔بی جے پی نے کبھی بھی ایماندار پارٹی کارکنوں کی عزت نہیں کی، کوئی قومی مفاد کی بات کریں تو اسے پارٹی میں نہیں سنا جاتا۔
اگر آپ کااپوزیشن ملک کے مفاد کی کوئی بات کر رہا ہے تو اس کا دھیان آپ کودینا چاہئے اس بات کا فقدان مودی حکومت میں ہمیشہ ہی دیکھنے کو ملا۔ اٹل بہاری واجپئی نے اندرا گاندھی کی موازنہ درگا سے کی تھی جبکہ وہ اپوزیشن میں تھے لیکن اپوزیشن اگر متحدہ مفاد میں کوئی بات کرتا ہے تو اس کی حمایت حکمران پارٹی کو کرنا چاہئے۔

کانگریس جوائن کرنے کے بعد شتروگھن سنہا نے لالو پرساد یادو کابھی شکریہ ادا کیا اس کے ساتھ ہی شتروگھن سنہا نے نوراتری کے موقع پر ملک کے باشندوں کو نیک خواہشات اورمبارکباد بھی دی۔ شترو نے کہا کہ بی جے پی کی طرف سے مسلسل دھمکیاں دی جا رہی تھی کہ شتروگھن سنہا کو نکال دیا جائے گا۔ میں پارٹی کب کبھی بھی نہیں چھوڑنا چاہتا تھا لیکن جس طرح کے پارٹی کی حرکت رہی اس کی وجہ سے مجھے پارٹی کو آج چھوڑنا پڑا اور آج میں نے کانگریس کا دامن تھاما ہے۔
دیسی انداز میں شتروگھن سنہا نے وزیر اعظم نریندر مودی پر بھی طنز کسا، انہوں نے کہا کہ موٹا سیٹھ تو جہاں ندی نہیں ہے وہاں بھی پل بنا سکتے ہیں۔ موجودہ وزیر اعظم ملک بھر میں اتنے وعدے کر رہے ہیں کہ وہ پورے ہوں گے یا نہیں اس پر بھی شک ہے۔ملک کو آزادی دلانے میں سب سے بڑی شراکت اور قربانی اگر کسی پارٹی کی رہی ہے تو وہ کانگریس پارٹی کا رہا ہے۔

جب شتروگھن سنہا سے یہ سوال کیا گیا کہ اس کی بیوی پونم سنہا مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کے خلاف لوک سبھا انتخابات لڑ رہی ہیں تو انہوں نے جواب میں یہ بتایا کہ کچھ بھی ہو سکتا ہے یعنی مطلب صاف ہے کہ لوک سبھا انتخابات سے پونم سنہا مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کو انتخابی ٹکر دیتی نظر آئیں گی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *