گزشتہ 5 سالوں میں 3 کروڑ 18 لاکھ اقلیتی طلبہ کو اسکالرشپ پیش کی گئی: نقوی

Share Article

 

مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے آج لوک سبھا میں وقفہ سوال کے دوران پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں بتایا ہے کہ مودی حکومت کے گزشتہ 5 سال کی مدت میں 3 کروڑ 18 لاکھ اسکالرشپ پیش کی گئی ہے۔ جس میں 50 فیصد اسکالر شپ لڑکیوں کو فراہم کیا گیا ہے۔ رکن پارلیمنٹ حاجی فضل الرحمن کے سوال کا جواب دیتے ہوئے نقوی نے بتایا کہ مرکزی اقلیتی وزارت کا بجٹ 500 کروڑ روپیہ بڑھا دیا گیا ہے۔

Image result for Scholarships offered to 18 lakh minority students in last 5 years: Naqvi

قابل ذکر ہے کہ مرکزی اقلیتی وزارت مولانا آزاد فاؤنڈیشن کے ذریعے ملک بھر کے اقلیتی طالب علموں کو اسکالرشپ پیش کرتا ہے۔ یہ اسکالر شپ براہ راست طور سے طالب علموں کے اکاؤنٹ میں ڈالی جاتیہے ۔مودی حکومت کے پچھلے 5 سال کے مدت کے دوران اقلیتی طالب علموں کو 3 کروڑ 18 لاکھ اسکالرشپ پیش کی گئی تھی۔ اس میں سے 50 فیصد اسکالر شپ لڑکیوں کو دی گئی ہے۔اس سلسلے میں اقلیتی وزیر مختار عباس نقوی کا کہنا ہے کہ مودی حکومت نے اقلیتوں کی منہ بھرائی کی سیاست کو درکنار کر کے انہیں برابری کا حق دینے کا کام کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ مودی حکومت کے سب کا ساتھ سب کا ترقی اور سب کا وشواس کے نعرے کے تحت اقلیتی سماج کے لوگوں کو دیگر پسماندہ طبقوںکے لوگوں کے ساتھ ترقی یافتہ بنانے کا کام کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ مودی حکومت کے 5 سالوں کی مدت میں 25 ڈگری کالج، 1151 انٹر کالج، 821 صحت مرکز، 71 پولی ٹیکنیک، 411 لڑکیاں ہاسٹل اقلیتی اکثریتی علاقوں میں کھولے گئے ہیں۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے مرشدآباد ملا پورم اور کشن گنج مراکز کی بحالی اور وہاں پر بہتر سے بہتر سہولت فراہم کرنے کے لئے کام کیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ گزشتہ یو پی اے کی حکومت کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ان تمام مراکز میں بہتر طریقے سے ترقیاتی کام نہیں ہو پایا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ مودی حکومت کے دوسری مدت کے ابتدائی دور میں ہی مرکزی اقلیتی وزیر مختار عباس نقوی نے یہ اعلان کیا ہے کہ اگلے 5 سالوں میں ملک کے اقلیتی سماج کے 5 کروڑ طالب علموں کو اسکالرشپ مہیا کی جائے گی جو ایک ریکارڈ رہے گا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *