سی بی آئی دفتر پہنچے آئی پی ایس راجیو کمار

Share Article

 

کولکاتہ، اربوں روپے کے ساردا چٹ فنڈ گھوٹالہ معاملے میں ثبوتوں کو مٹانے کے الزام میں کولکاتہ پولیس کے سابق کمشنر راجیو کمار پہلی بار کولکاتہ میں مرکزی جانچ بیورو (سی بی آئی) کے دفتر میں پہنچے ہیں۔ جمعہ کی صبح 11بجے کے قریب وہ سالٹ میں واقع کمپلیکس میںسی بی آئی کے دفتر میں پہنچے۔ بتایا گیا ہے کہ ان سیطویل پوچھ گچھ ہوگی۔

 

گزشتہ 3 فروری کو انہیں سی بی آئی کے نوٹس کے بعد وزیر اعلی ممتا بنرجی 70 گھنٹے تک دھرنے پر بیٹھ گئی تھیں۔راجیو کما رنے سی بی آئی کے ذریعہ گرفتار کئے جانے سے بچنے کیلئے ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا،اس کے باوجود انہیں سی بی آئی کے سامنے پیش ہونا پڑا ۔کولکاتہ پولیس کی جانب سے 6 باکس میں بھرے ایسے دستاویزات سی بی آئی کو دیے گئے ہیں جسے کولکاتہ پولیس نے آج تک چھپا کر رکھا تھا۔ چٹ فنڈ کیس کی تحقیقات کے لئے ریاستی حکومت کی جانب سے تشکیل دی گئی خصوصی تفتیشی ٹیم (ایس آئی ٹی) کے سربراہ راجیو کمار تھے اسی لیے انہوں نے ان دستاویزات کو سی بی آئی کو نہیں سونپنے کیلئے ان سے پوچھ گچھ کی جائے گی۔ اس کے علاوہ ثبوت کو مٹانے کے معاملے میں بھی ان سے پوچھ گچھ ہونی ہے۔

 

سمجھا جا رہا ہے کہ اب ان کی مشکلیں بڑھیں گی۔جانچ ایجنسی کے ذرائع کے حوالے سے اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ راجیو کمار سے پوچھ گچھ شروع کر دی گئی ہے۔ اس معاملے کی ابتدائی تفتیش سے لے کر شاردا گروپ کے مڈلینڈ پارک میںواقع دفتر سے ایک ٹرک سے زیادہ دستاویزات برآمد کرنے کے سلسلے میں ان سے معلومات لی جائے گی۔اگرچہ ہائی کورٹ نے فی الحال ان کی گرفتاری پر روک لگا کر رکھی ہے اس لیے جانچ ایجنسی ان کے خلاف سختی تو نہیں برت سکتی ہے لیکن تحقیقات میں تعاون نہ کرنے پر انہیں بار بار سمن بھیجا جا سکتا ہے۔ 12 جون کے بعد ہائی کورٹ کھل جائے گا اور 14 جون سے ان کی درخواست پر مسلسل سماعت ہوگی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *