راجیو گاندھی قتل: سپریم کورٹ نے تمل ناڈو حکومت سے مانگی اسٹیٹس رپورٹ

 

راجیو گاندھی قتل معاملے پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے تمل ناڈو حکومت سے پوچھا ہے کہ مجرم اے جی پیراری ولن اور دیگر قصورواروں کی رہائی کے معاملے میں اب تک کیا اقدامات کئے گئے ہیں۔ کورٹ نے حکومت کو دو ہفتے میں اسٹیٹس رپورٹ داخل کرنے کی ہدایت دی ہے۔ قابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ نے اس معاملے پر پہلے حکومت سے کہا تھا کہ وہ رحم کی درخواست پر فیصلہ کرے۔ درخواست گزار پیراری ولن کی جانب سے کہا گیا ہے کہ انہوں نے 2018 میں گورنر کے پاس رحم کی درخواست لگائی تھی اور کہا تھا کہ ان کی باقی سزا معاف کی جائے۔ وہ پہلے ہی 27 سال جیل میں رہ چکا ہے۔

سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے سی بی آئی کو اس بات کے لئے پھٹکار لگائی کہ وہ اس معاملے میں سازش کی تحقیقات میں کوئی خاص پیش رفت نہیں کر سکی ہے۔ کورٹ نے کہا کہ اب یہ واضح طو ر پر سمجھ میں آ رہا ہے کہ آپ اس معاملے میں کچھ نہیں کرنا چاہتے ہیں۔ قتل کے مجرم پیراری ولن نے الزام لگایا ہے کہ سی بی آئی نے ٹھیک سے جانچ نہیں کی۔ اس نے بین الاقوامی سازش کی پڑتال نہیں کی۔ سماعت کے دوران پیراری ولن کے وکیل نے کہا تھا کہ اس واقعہ کے 20 سال گزر چکے ہیں۔ کولمبو جیل میں بند نکسن سے پوچھ گچھ کی سمت میں کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے۔ نکسن نے شناخت کی سپلائی کی تھی، جس سے راجیو گاندھی کے قتل کی گئی تھی۔ بم کو لے کر تحقیقات میں کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے۔ پیراری ولن کو صرف بیٹری لانے کے جرم میں اتنے سالوں تک جیل میں کاٹنا پڑا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *