بھارتی ریلوے کی نجکاری کی کوئی تجویز نہیں: پیوش گوئل

Share Article

 

مرکزی وزیر ریل پیوش گوئل نے کہا ہے کہ نجی کمپنیوں کے ہاتھوں چلانے کے لئے ابھی تک کسی بھی مخصوص مسافر گاڑی کی شناخت نہیں کی گئی ہے۔ گوئل نے جمعرات کو لوک سبھا میں مسافر ٹرینیں چلانے کے لئے نجی کمپنیوں کی خدمات لینے سے متعلق ایک تحریری سوال کے جواب میں یہ معلومات دی۔انہوں نے کہا، تاہم مسافروں کو عالمی خدمات مہیا کرانے کے لئے بھارتی ریل کے ذریعے مسافر ٹرینیں چلانے کے لئے نجی کمپنیوں کی شرکت سمیت مختلف اختیارات کی جانچ کی جا رہی ہے۔ ایک اور سوال کے جواب میں وزیر ریل نے کہا ہے کہ بھارتی ریلوے کی نجکاری کی کوئی تجویز نہیں ہے۔

 

Image result for indian railway

عوامی خدمات کے وسیع پیمانے پر نجکاری سے غریب طبقے کو ہونے والے سب سے زیادہ نقصان سے متعلق ایک اور سوال کے جواب میں گوئل نے کہا، ستمبر 2018 میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کو پیش کی گئی رپورٹ میں انسانی حقوق کے تحفظ کے لئے بڑے پیمانے پر ہونے والے شخصی کے چیلنجوں پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ بہرحال، بھارتی ریلوے کی نجکاری کی کوئی تجویز نہیں ہے۔

Image result for indian railway

پرائیویٹ کمپنیوں کی طرف سے ریلوے لائن بچھائے جانے جیسی بڑی سرمایہ کاری والے کاموں میں دلچسپی نہیں لینے سے متعلق سوال کے جواب میں وزیر ریل نے کہا، موجودہ بھارتی ریلوے نیٹ ورک سے بندرگاہوں، بارودی سرنگوں اور صنعتی کلسٹرو ںکے لئے پہلے سرے سے آخری سرے تک رابطہ مہیا کرانے کے لئے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ (پی پی پی) سے متعلق مقابلہ پالیسی پر منصوبے شروع کئے گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اس میں عوامی علاقے کے آلات (PSU)، ریاستی حکومت اور پرائیویٹ صنعت سمیت اسٹریٹجک پارٹنر آگے آئے ہیں اور مشترکہ خصوصی صنعتی منصوبے(ایس پی وی) میں سرمایہ کاری کی گئی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *