گینگ بنا کر کالج کے طالب علم کھیل رہے تھے گارڈن میں PUBG-دس طلباگرفتار

Share Article
pubg-mobile-ban

راجکوٹ: گجرات پولیس نے راجکوٹ میں کالج کے 10 طالب علموں کو ایک باغ میں بیٹھ کر آن لائن گیم PUBG کھیلنے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔ یہ تمام کالج کے طالب علم ہیں اور گارڈن میں گینگ بنا کر گیم کھیل رہے تھے، تبھی پولیس کو کسی نے اس کی اطلاع دے دی۔ گجرات پولیس نے پہلے ہی PUBG کو بین کرنے کے لئے نوٹس جاری کیا ہے جس کے تحت یہ کارروائی کی گئی ہے۔

ملک میں PUBG گیمز کھیلنے کو لے کر یہ اب تک کی پہلی گرفتاری ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ہم یہ سخت پیغام دینا چاہتے ہیں کہ PUBG کو بین کرنے والا نوٹس محض کاغذ کا ٹکڑا نہیں ہے۔ یہ ملک کے طالب علموں کو گمراہ کر رہا ہے، لہٰذا لوگوں کو بیدار کرنے کے لئے ہم سخت قدم اٹھا رہے ہیں۔

پولیس تمام طالب علموں کو انتباہ دینے کے بعد ضمانت پر چھوڑ دیا ہے، لیکن PUBG کو لے کر حکومت کے اس رویہ پر لوگ خاصے ناراض ہیں۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ تفریح کا ذریعہ ہے اور اس پر پابندی لگانا غلط ہے۔

غور طلب ہے کہ آن لائن پ (PUBG) گیم پر گجرات حکومت نے کچھ دنوں پہلے ہی پابندی لگا دی ہے۔ ساتھ ہی ریاست کے محکمہ تعلیم کو یہ ہدایت جاری کی گئی تھی کہ اگر بچے اسکول میں PUBG یا کوئی دیگر لت والے گیمز کھیلتے ہیں، انہیں ان کے نقصان کے بارے میں بتایا جائے اور اس کی عادت کو چھڑایا جائے۔

گجرات حکومت کا کہنا ہے کہ اب تک ایسے کئی معاملے سامنے آ چکے ہیں جن میں PUBG کی وجہ سے حادثہ ہوئے ہیں۔ سرپرست مسلسل یہ شکایت بھی کرتے رہے ہیں کہ اس گیم کی وجہ سے بچوں میں تشدد رجحان آ رہی ہے، اس لئے اس پر پابنی عائد کرنا ضروری ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *