ثبوت مانگتے ہیں راہل گاندھی، ان کے گلے میں بم باندھ کر پاکستان بھیج دو: پنکجا منڈے

Share Article

 

اتوار کو مہاراشٹر بی جے پی صدر راؤ صاحب دانوے کے ایک اجتماع میں پنکجا منڈے نے کہا کہ ہم نے اپنے فوجیوں پر كائيرانہ حملے کے بعد سرجیکل اسٹرائک کیا، وہ پوچھتے ہیں کہ سرجیکل اسٹرائککہاں ہوا، میں کہتی ہوں راہل گاندھی کے گلے میں بم باندھ دو، اور اسے وہاں بھیج دو۔

 


بی جے پی لیڈر پنکجا منڈے نے کہا ہے کہ سرجیکل اسٹرائک کا ثبوت مانگنے والے راہل گاندھی کے گلے میں بم باندھ کر پاکستان بھیج دینا چاہئے. مہاراشٹر کے جالنہ میں ایک پروگرام میں پنکجا منڈے نے کہا کہ آج کل کوئی بھی کھڑا ہوتا ہے اور نریندر مودی سے سوال کرنے لگتا ہے کہ سرجیکل اسٹرائک کہاں ہوا، کتنے لوگ مرے؟

 

Image result for pankaja munde war to rahul gandhi

اتوار کو مہاراشٹر بی جے پی صدر راؤ صاحب دانوے کے ایک اجتماع میں پنکجا منڈے نے کہا، “ہم نے اپنے فوجیوں پر كائيرانہ حملے کے بعد سرجیکل اسٹرائک کیا، وہ پوچھتے ہیں کہ سرجیکل اسٹرائک کہاں ہوا، میں کہتی ہوں راہل گاندھی کے گلے میں بم باندھ دو اور اسے وہاں بھیج دو، آج کل کوئی بھی کھڑا ہوتا ہے اور پی ایم نریندر مودی سے سوال کرنے لگتا ہے، مودی ایسے لوگوں کو جانتے تک نہیں، پھر بھی یہ لوگ پوچھتے ہیں کہ سرجیکل اسٹرائک کہاں ہوئی، کتنے لوگ مرے، ایسے لوگوں کو بم سے باندھ دینا چاہئے اور ہیلی کاپٹر سے پھینک دینا چاہئے. تب ان لوگوں کو پتہ چل جاتا۔ ” پنکجا منڈے نے کہا کہ یہ لوگ آرمی پر شک کر رہے ہیں. ایسے لوگوں کو چاہئے کہ جس طرح سے سرحد پر ہمارے جوان جدوجہد کر رہے ہیں اسی طرح جمہوریت کے سپاہی کے طور پر آپ کو بھی لڑنا چاہئے۔ “سال 2016 میں جموں و کشمیر کے اوري میں فوج کے کیمپ پر دہشت گردانہ حملہ ہوا تھا. اس حملے میں فوج کے 20 جوان شہید ہو گئے تھے. اس حملے کے بعد ہندوستان نے ستمبر 2016 میں پی او میں سرجیکل اسٹرائک کی تھی اور دہشت گرد ٹھکانوں کو نےستانابود کر دیا تھا. میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارت کی کارروائی میں 30 سے 35 دہشت گرد ہلاک ہو گئے تھے.

 

 

بی جے پی کے سینئر لیڈر رہے گوپی ناتھ منڈے کی بیٹی پنکجا منڈے مہاراشٹر حکومت میں دیہی ترقی اور عورت اور بال کی ترقی وزیر ہیں۔ پنکجا منڈے کی بہن پریتم منڈے اس بار بیڑ حلقہ سے الیکشن لڑ رہی ہیں. یہاں پر 18 اپریل کو پولنگ ہو چکا ہے.

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *