پرینکا نے کہا :’ایک ایسا بھارت ہوجہاں کوئی کسی سے یہ نہ پوچھے کہ اس کا مذہب کیا ہے‘ 

Share Article

priyanka-gandhi

ایودھیا: کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے گاندھی خاندان کا مقابلہ راج شاہیسے کرنے پر بی جے پی کی مذمت کی اور انکشاف کیا کہ ان کی دادی اندرا گاندھی نے راج شاہی والی سہولیات سے خاندان کو آزاد رکھا تھا۔

سن بیم پبلک اسکول کیطالب علموں سے بات چیت کرتے ہوئے پرینکا نے یہ بھی کہا کہ ان کا’ جذباتی خواب‘ ایسے بھارت کو دیکھنے کا، جہاں کوئی کسی سے یہ نہ پوچھے کہ اس کا مذہب کیا ہے۔

سال 1972 میں اس وقت کے وزیر اعظم اندرا گاندھی نے مہاراجاؤں کو دی جانے والی سہولیات سے اپنے خاندان کو دور رکھا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایسا نہیں ہو پاتا، اگر گاندھی خاندان خود کو شاہی خاندان کے طور پر دیکھتا۔

ڈائیلاگ سیشن میں حصہ لینے والے ایک کانگریس لیڈر نے ہفتہ کو کہا کہ ایک طالبہ نے پرینکا سے پوچھا کہ بھارت کے مستقبل کے بارے میں ان کا خواب کیا ہے۔ جواب میں انہوں نے کہا کہ بھارت کے لئے ان کا ’جذباتی خواب‘ ہے، ایک ایسے بھارت کو دیکھنے کا خواب، جہاں کوئی کسی سے یہ نہ پوچھے کہ اس کا مذہب کیا ہے، ہندوتو، عیسائیت، اسلام یا کسی اور مذہب کے بارے میں کوئی سوال نہ کرے۔

کانگریس لیڈر نے کہا کہ وہ ایسا بھارت دیکھنا چاہتی ہیں، جہاں ’خواتین مردوں کے برابر ہوں اور ان کے ساتھ ویسا برتاؤ نہ ہو جیسا آج ہو رہا ہے۔‘

تین دن کے صوبائی دورے پر نکلیں مشرقی اتر پردیش انچارج ایودھیا جانے سے پہلے اپنے بھائی اور پارٹی صدر راہل گاندھی کے حلقہ امیٹھی اور ماں اور یو پی اے کی صدر سونیا گاندھی کے حلقہ رائے بریلی گئیں۔

ایودھیا میں پرینکا ایک مزار پر گئیں اور ہنومان گڑھی مندر میں پوجا کی

پرینکا راہل گاندھی کے گئے اعلان ’نیا’ے‘ (کم از کم آمدنی کی اسکیم) کے وعدے کی تنقید کئے جانے کو لے کر بھی بی جے پی پر خوب برسیں۔ بی جے پی لیڈروں کا کہنا ہے کہ پیسے کی کمی کی وجہ سے راہل کا یہ وعدہ پورا نہیں ہو سکتا جواب میں پرینکا نے کہا، ’بی جے پی یہ جواب دے کہ حکومت صنعتکاروں کے قرض معاف کرنے کے لئے رقم کہاں سے لائی تھی۔‘

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *