ایمبولینس نہ ملنے پر ای-رکشہ میں ہی خاتون نے بچے کوجنم دیا،بچے کی موت

Share Article
e-rikshaw
محکمہ صحت خدمات کوبہتربنانے کے سرکاری دعوؤں کی پھرپول کھل گئی ۔اتناہی نہیں اترپردیش سرکارکی صحت خدمات لگاتاردم توڑرہی ہیں۔اس کی ایک مثال باغپت میں دیکھنے کوملا۔اتر پردیش کے باغپت ضلع میں محکمہ صحت کی سخت لاپروائی کا معاملہ سامنے آیا ہے۔جب کئی بار فون ملانے کے باوجودحاملہ خاتون کوایمبولینس نہیں ملی۔ وقت پر ایمولینس نہ ملنے کی وجہ سے حاملہ خاتون کو ای رکشتہ پر ہی ڈیلیوری کرنے پر مجبور ہونا پڑا۔ وہیں جب خاندان بچے کولیکرضلع اسپتال پہنچے توسرکاری اسپتال میں ڈاکٹروں نے نوزائیدہ بچے کوایڈمٹ کرنے منع کردیا۔علاج نہیں ملنے کی وجہ سے نوزائیدہ نے دم توڑدیا۔

 

متاثرہ اہل خانہ کے مطابق،پہلے توکافی دیرتک ایمبولینس کا نمبرہی نہیں لگا۔اس کے بعدحاملہ خاتون کواس کاشوہر ای رکشہ سے ہی اسپتال لے گیا۔اس دوران خاتون نے ای رکشہ میں ہی بچے کوجنم دیا۔اہل خانہ نے بتایاکہ ، کسی طرح زچہ بچہ کو اسپتال تک لے گئے ۔لیکن ڈاکٹروں نے مراہوابتاکرعلاج کرنے سے منع کردیا۔
ڈاکٹرکے مطابق ، بچی پری میچیورتھی ، جس کا وزن بھی قریب 800گرام تھا۔اسلئے بچی کوکسی دوسرے اسپتال میں علاج کیلئے بھرتی کرنے کوکہاتھا۔وہیں،معاملہ سامنے آنے کے بعد سی ایم او نے تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔جانکاری کے مطابق، جب ضلع اسپتال میں بچے کاعلاج کیلئے منع کردیا، تواہل خانہ نے بچے کوایک پرائیویٹ اسپتال میں داخل کرایا۔جہاں علاج کے دوران اس کی موت ہوگئی ۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *