پاکستان سے اب میز پر نہیں، جنگ کے میدان میں بات ہو: گمبھیر

Share Article

 

سیر نگر جموں ہائی وے پر جمعرات کو ہوئی دہشت گردانہ حملے سے دکھی سابق ہندوستانی سلامی بلے باز گوتم گمبھیر نے کہا کہ اب پاکستان سے ساتھ ٹیبل پر نہیں بلکہ جنگ کے میدان میں بات ہونی چاہئے۔

 

جموں وہ کشمیر کے پلواما ضلع میں سیر نگر جموں ہائی وے پر جمعرات کو ہوئے دہشت دانہ حملے سے دکھی سابق ہندوستانی سلامی بلے باز گوتم گمبھیر نے کہا کہ اب پاکستان کے ساتھ ٹیبل پر نہیں بلکہ جنگ کے میدان میں بات ہونی چاہئے۔
جموں و کشمیر میں 1989میں دہشت گردکے سیر اٹھانے کے بعد سے ہوئے اب تک کے سب سے بڑے دہشت گردانہ حملے میں ایک خود کش حملہ ور نے جمعرات کو پلواما ضلع میں سری نگر جموں ہائی پر اپنی دھماکہ خیز مواد سے بھر پور ایس یو وی مرکزی ریزرو پولیس فورس (سی آر پی ایف) کی بس سے ٹکرا دی اور اس میں دھماکہ کر دیا۔

 

اس دہشت گردانہ حملے میں ابھی تک 37جوان شہید ہوئے ہیں۔ گمبھیر نے ٹویٹ پر لکھا، ہاں ’ہاں الگاو وادیوں دہشت گردوں اور پاکستان سے بات تو ضرور ہونی چاہئے لیکن یہ بات ٹیبل پر نہیں بلکہ اب جنگ کے میدان میں ہونی چاہئے۔ اب بس بہت ہوا۔
اس کے علاوہ ٹیم انڈیا کے سابق اوپنر ویریندر سہواگ اور سوریش رائنا، مینک اگروال، محمد کیف، وی وی ایس لکشمن اور شیکھر دھون نے بھی اس دہشت گرد حملے کی سخت مزمت کی ہے۔

 

ویریندر سہواگ نے کہا، حقیقت میں جموں و کشمیر میں ہمارے سی آر پی ایف پر ہوا بزدلانہ حملے سے کافی دکھی ہیں۔ ا سحملے میںہمارے کئی بہادر جوان شہید ہوئے ہیں۔ درد کو بیاں کرنے کے لیے میرے پاس کوئی لفظ موجود نہیں ہیں۔ میں ان زخمی جوانوں کے فوری صحت یابی کی دعا کرتاہوں۔

 

بتادیں کہ جموں کشمیر کے پلواما میں آونتی پورا کے گوری پورا علاقےمیں سیکورٹی فورسیز کے قافلے پر جیش محمد دہشت گرد تنظیم نے خود کش حملہ کیا۔ جموں کشمیر میں حفاظتی دستوں پر اب تک کے سب سے بڑی خود کش حملے میں 42جوان شہید ہو گئے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *