طلاق ثلاثہ بل پراویسی نے کہا!28دسمبرکولوک سبھاکاماحول 6دسمبرجیساتھا

Share Article
owaisi
رکن پارلیمنٹ بیرسٹراسدالدین نے 28دسمبرکولوک سبھامیں ثلاق ثلاثہ کولیکرہوئی بحث کاموازنہ برابری مسجدکوشہیدکرنے سے کیاہے۔آل انڈیامجلس اتحادالمسلمین کے قومی صدر اسدالدین اویسی نے ’انڈیاٹوڈے‘سے کہاکہ 28دسمبرکولوک سبھاکاماحول 6دسمبر 1992 جیساتھا۔انہو ں نے کہاکہ ہم نہ ہی 6دسمبرکوبھول سکتے ہیں اورنہ ہی لوک سبھا میں گذشتہ 28دسمبرکے منظرکوبھول پائیں گے۔
تمام ترمخالفت کے بعدبھی لوک سبھامیں تین طلاق بل کے پاس ہونے کے سوال پراسدالدین نے اویسی نے کہاکہ اگرکوئی مسلم شخص اپنی بیوی کوتین بارطلاق کہہ کرچھوڑدیتاہے، تووہ جرم ہے اوراسے روکاجاناچاہئے ،لیکن اس بات کی حمایت کرنے کیلئے کوئی ایسی حقیقت یااعدادوشمارموجودنہیں ہے جس سے یہ کہاجاسکے کہ یہ ایک سماجی برائی ہے جوسماج کونقصان پہنچاتی ہے۔انہو ں نے کہاکہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہاکہ صرف تین طلاق کہنے سے شادی ختم نہیں ہوگی تواس کے لئے تین سال جیل کی سزاکی کیاضرورت ہے؟ہمارے خواتین کوتحفظ دینے کیلئے بہت سے قانون ہیں،جس میں آئی پی سی کی دفعات 498اے ،گھریلوتشدد ایکٹ 2005اورمسلم خاتون(طلاق پرحق کے تحفظ)ایکٹ 1986کے تحت دفعہ 20اور22شامل ہیں۔اویسی نے تین طلاق بل میں سزاکے طورپر تین سال جیل کی سزاکی مخالفت کرتے ہوئے سوال کیاکہ تین طلاق کہنے پرجیل بھیجے جانے والے شخص کی بیوی کوبھتہ اورمعاوضہ کیسے ملے گا؟۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *