پاسپورٹ نہیں چہرہ چاہئے 

Share Article


سائنس کے اس دور میں نا ممکن ،ممکن ہوتا جارہا ہے۔ اب تک ہوتا یہ تھا کہ جب ہم کسی ہوائی اڈے پر جاتے تھے تو وہاں پاسپورٹ کے جھمیلے بہت ہوا کرتے تھے۔ مگر اب نئی ٹکنالوجی نے ان جھمیلوں کو ختم کردیا ہے۔اب ہوائی اڈوں پرمسافروں کو شناخت کے لیے قطاروں میں کھڑے ہونے سے جان چھوٹی۔ روایتی شناخت کے طریقے کے بجائے اب صرف چہرے ہی سے مسافر کی شناخت ہوسکے گی اور چہرہ ہی مسافر کا پاسپورٹ ہوگا۔
امریکا میں پہلی بار’’ہارٹزفیلڈ جیکسن‘‘ہوائی اڈے پر اس نئی ٹیکنالوجی کا کامیاب بائیومیٹرک تجربہ کیا گیا ہے۔اس نئی ٹیکنالوجی کا مقصد ہوائی اڈوں پر مسافروں کوچیکنگ کے تکلیف دہ انتظار کے عمل سے نجات دلانا، مسافروں اور عملے کا قیمتی وقت بچانا ہے۔اس ٹیکنالوجی کی مدد سے کسی بھی مسافر کا چہرہ شناخت کرنے سے اس کی مکمل شناخت کی جاسکے گی اور الگ سے پاسپورٹ کی مکمل تفصیلات چیک کرنا ضروری نہیں ہوں گی۔اس وقت امریکا سمیت دنیا کے تمام ہوائی اڈوں پر روایتی بائیومیٹرک شناخت سسٹم رائج ہے مگر مستقبل قریب میں شناخت کا نظام ایک نئی جہت اختیار کرگیا ہے

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *