مظفرنگر:کوال قتل معاملہ میں سبھی سات قصورواروں کوعمرقید،2-2لاکھ روپے کا جرمانہ

Share Article
mujjafar-nagar-kawal
اترپردیش کے ضلع مظفر نگر کو 2013 میں فسادات کی آگ میں جھونک دینے والے کوال قتل واقعہ میں عدالت نے آج سبھی سات ملزمین کو عمرقیدکی سزسنائی ہے۔پانچ سال کی عدالتی عمل کے بعد عدالت نے کوال قتل معاملے میں تمام 7 ملزمان کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔27 اگست، 2013 کو جانسٹھ کوتوالی علاقے کے کوال گاؤں میں ملک پورا کے گورواور اس کے ماموں زاد بھائی سچن کا قتل کر دیاگیاتھا۔اس حادثہ میں کوال کے شاہنوازکی بھی موت ہوئی تھی۔جس کے بعد مہاپنچایت کے دوران دنگابھڑک گیاتھا۔یہ واقعہ مظفر نگر فسادات کا سبب بنی،جس میں 65سے زیادہ بے گناہوں کی موت ہوگئی۔پانچ سال کی عدالتی عمل کے بعدکورٹ نے سات ملزموں کواس معاملے میں قصوروارقراردیاتھا۔پولیس انتظامیہ نے فیصلے کو لے کر سیکورٹی کے نظام کے سخت انتظامات کئے تھے۔سزاکے علاوہ سبھی ملزموں پر2-2لاکھ روپے کا جرمانہ بھی لگایاگیاہے۔بتایا گیا کہ اسی رقم میں سے 80 فیصد فنڈز متاثرہ خاندانوں کو دی جائے گی۔

کوال واقعہ کے بعد مظفر نگر اور شاملی میں فساد بھڑک گیا تھا۔پانچ سال چلی کیس کی سماعت کے بعد اے ڈی جی کورٹ نمبر7کے جسٹس ہمانشو بھٹناگر نے بدھ کوسبھی سات ملزموں کودوہرے قتل معاملے میں قصوروارقراردیاتھا۔گوروکے والد رویندرسنگھ نے جانسٹھ کوتوالی میں حادثہ کے دن مقدمہ درج کرایاتھا۔کیس کے ملزموں مجسم اوراس کے بھائی مزمل ، فرقان، ہلاک شاہنوازکے سگے بھائی جہانگیر و ندیم، افضال اوراس کے بھائی اقبال کوکورٹ نے دفعات147, 148, 149، 302،اور دفعہ506کے تحت سزاکاحقدارماناہے۔قصوروارملزموں کوآج عدالت کے ذریعے سزاسنائی گئی۔
غورطلب ہے کہ مدعی فریق کے وکیل انل جندل نے کہاکہ کوال کانڈ میں سچن اورگوروکوبہیمانہ طریقے سے قتل کیاگیاتھا۔یہ واقعہ کی وجہ سے مظفرنگرفسادات ہوا۔جس میں 65سے زیادہ بے گناہوں کی موت ہوگئی۔کیس میں قصوروارقاتلوں کو کم از کم عمر قید کی سزا کی سزا سنائی گئی ہے اس میں زیادہ سے زیادہ سزا پھانسی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *