مفتی عبداللہ پھولپوری کا انتقال ناقابل تلافی نقصان

Share Article
معروف عالم دین ،عارف باللہ مفتی عبداللہ پھولپوری کی وفات پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے حافظ شجاعت فیض عام چیری ٹیبل ٹرسٹ کے سکریٹری حافظ شمس الہدی قاسمی نے کہا کہ ان کی وفات سے ہندوستان کے مسلمانوں کا علمی خسارہ ہی نہیں ہوابلکہ معرفت و سلوک کے طالبین کو بھی سخت نقصان پہنچا ہے۔انھوں نے کہا کہ مفتی صاحب ہندوستان کے ایک ایسے خانوادے سے تعلق رکھتے تھے جو ایک عرصے سے علم و فضل اور تصوف و سلوک کے حوالے سے اپنی امتیازی پہچان رکھتا ہے ،ان کے داداحضرت مولانا شاہ عبدالغنی پھولپوری حکیم الامت حضرت تھانوی کے اجل خلفاء میں سے تھے اور انہوں نے مشرقی یوپی میں علم ودین کی اشاعت اور لوگوں کے قلوب کی اصلاح کے لئے اہم کارنامے انجام دئے۔مولانا نے کہا کہ مفتی عبداللہ پھولپوری نے جہاں مدرسہ بیت العلوم سرائے میر میں ایک موقر استاذ اور مدیر و منتظم کی حیثیت سے قابل قدر خدمات انجام دیں وہیں ان کے ذریعے سے ہزاروں لوگوں نے سلوک و معرفت کی منزلیں بھی طے کیں،وہ اپنے وقت کے اکابر اور اولیاء اللہ کے مقرب رہے،ان کی صحبت سے فیض حاصل کیااورپھر ان بزرگوں کے فیضان کو آنے والی نسلوں تک پہنچایا۔
واضح رہے کہ مفتی عبداللہ پھولپوری ان دنوں سفر عمرہ پر تھے،جہاں اچانک ان کی طبیعت بگڑ گئی،فوری طورپر انہیں ایک ہسپتال میں داخل کیاگیا مگر جانبرنہ ہوسکے اور وہیں وفات ہوگئی،حافظ شمس الہدی قاسمی نے مرحوم کے لئے مغفرت و بلندیِ درجات کی دعاء کی۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *