ایودھیا معاملے میں مودی سرکارپہنچی سپریم کورٹ

Share Article
babri-masjid-sc
بابری مسجد-رام جنم بھومی تنازع کولیکر مرکزکی نریندرمودی سرکارنے بڑاقدم اٹھاہے۔ مرکزنے ایودھیامیں متنازعہ رام جنم بھومی -بابری مسجد جگہ کے پاس حصول کی گئی 67 ایکڑ زمین کو اس کے اصل مالکان کو لوٹانے کی اجازت مانگنے کے لیے منگل کو سپریم کورٹ کا رخ کیا ہے۔ مرکزی سرکارنے سپریم کورٹ میں عرضی دائر کرکے کہاہے کہ ایودھیامیں جوغیرمتنازعہ جگہ (زمین )ہے،اسے رام جنم بھومی نیاس کوواپس سونپ دیاجائے۔سرکارکی طرف سے کہاگیاہے کہ جس زمین پررام جنم بھومی -بابری مسجدکولیکرتنازعہ ہے وہ سپریم کورٹ اپنے پاس رکھے ۔مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ میں عرضی لگاکرکہا کہ ایودھیا میں 67 ایکڑ زمین حکومت کی ہے۔ حکومت نے کہا ہے کہ ایودھیا میں صرف 2.77 ایکڑ زمین پر تنازعہ ہے اور باقی زمین پر کوئی تنازعہ نہیں ہے، لہذا زمین کا کچھ حصہ رام جنم بھومی نیاس کو دیا جائے۔مودی سرکارنے عدالت میں صاف کردیاہے کہ غیرمتنازعہ زمین رام جنم بھومی نیاس کوسونپی جائے، تاکہ اس حصے پر تعمیرشروع ہوسکے۔
بتادیں کہ آج ہی سپریم کورٹ میں اس معاملے کولیکرسماعت ہونی تھی، لیکن جسٹس بوبڈے کے چھٹی پرجانے کی وجہ سے سماعت ملتوی ہوگئی۔مرکزی حکومت نے اپنی درخواست میں کہا کہ 67 ایکڑ زمین حکومت نے حاصل کی تھی جس پر سپریم کورٹ نے موجودہ صورت حال برقرار رکھنے کا حکم دیا ہے۔ حکومت نے کہا کہ 2.77 ایکڑ متنازعہ زمین کے علاوہ باقی زمین پر کوئی تنازعہ نہیں ہے، لہذا اس پر موجودہ صورت حال برقرار رکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔مودی سرکارنے سپریم کورٹ سے کہاہے کہ ایودھیامیں ہندوفریق کوجوحصہ دیاگیاہے، وہ رام جنم بھومی نیاس کودے دیاجائے۔جبکہ 2.77ایکڑزمین کا کچھ حصہ حکومت ہندکولوٹا دیاجائے۔
ایودھیامیں رام جنم بھومی-بابری مسجدمتنازعہ زمین کے آس پاس کی قریب 70ایکڑزمین مرکزی سرکارکے پاس ہے۔اس میں سے 2.77ایکڑکی زمین پرالہ آبادہائی کورٹ نے فیصلہ سنایاتھا۔جس زمین پرتنازعہ ہے وہ زمین 0.313ایکڑہی ہے۔1993میں سپریم کورٹ نے اس زمین پراسٹے لگایاتھا اورکسی بھی طرح کی ایکٹیویٹی کرنے سے انکارکیاتھا۔
سرکارکاکہناہے کہ اس زمین کوچھوڑکرباقی زمین حکومت ہندکوسونپ دی جائے۔مودی سرکارکاکہناہے کہ جس زمین پرتنازعہ نہیں ہے اسے واپس سونپا جائے۔غورطلب ہے کہ 29جنوری کوسپریم کورٹ میں رام مندرمعاملے کی سماعت ہونی تھی، لیکن وہ ٹل گئی۔سپریم کورٹ میں اس معاملے کی سماعت پانچ ججوں کی بنچ کررہی ہے۔ جس میں چیف جسٹس رنجن گگوئی، جسٹس اشوک بھوشن، جسٹس عبدالنظیر، جسٹس ایس اے بوبڈے اورجسٹس ڈی وائی چندرچوڑشامل ہیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *