منموہن نے کہا!مجھے بولنے کی صلاح دیتے تھے، اب خود عمل کریں پی ایم مودی

Share Article
dr-manmohan-singh-pm-modi
کٹھوعہ ،اناؤ اوردیگرعصمت دری اورقتل معاملے پر خاموش رہے وزیراعظم نریندرمودی کو سابق وزیراعظم ڈاکٹرمنموہن سنگھ نے آڑے ہاتھوں لیاہے۔ڈاکٹرمنموہن سنگھ نے کہاکہ پی ایم مودی کواس صلاح پرعمل کرناچاہئے جووہ مجھے دیتے تھے، انہیں بولتے رہنا چاہئے۔ منموہن سنگھ نے کہاکہ پی ایم مودی نے کبھی جومجھے صلاح دی تھی، اب اس پرخود اس پرعمل کریں اورایسے موقعوں پرکچھ بولیں۔
دراصل ’انڈین ایکسپریس ‘ سے بات چیت میں ڈاکٹرسنگھ نے کہاکہ انہیں اس بات پرخوشی ہے کہ اتنے لمبے وقت خاموشی بنائے رکھنے کے بعدآخرکارپی ایم مودی بابا صاحب امبیڈکر کی جینتی کے موقع پر کچھ بولے۔ جمعہ کوپی ایم مودی نے کہاتھاکہ ہندوستان کی بیٹیوں کوانصاف ملے گا اورقصورواروں کوبخشانہیں جائے گا۔منموہن سنگھ سے جب یہ پوچھاگیاکہ بی جے پی ان کا مذاق بناتے ہوئے انہیں ’مون موہن سنگھ‘ کہتی تھی، توسابق پی ایم نے کہاکہ ’انہیں اپنی پوری زندگی میں اس طرح کے تبصروں کا سامنا کرناپڑاہے۔‘انہو ں نے کہاکہ مجھے لگتاہے کہ پی ایم مودی جومجھے صلاح دیاکرتے تھے۔اس پرانہیں خود عمل کرناچاہئے اوراکثربولتے رہنا چاہئے۔میڈیا سے مجھے پتہ چلاتھا کہ وہ میرے نہ بولنے پرتنقیدکیا کرتے تھے۔انہیں اب خود دی گئی صلاح پرعمل کرنا چاہئے۔
منموہن سنگھ نے کہا کہ ضروری مسائل پر مودی کی خاموشی سے لوگوں میں یہ یقین مضبوط ہوگا کہ وہ کسی بھی جرائم سے بچ جائیں گے۔انہوں نے کہا،”مجھے لگتا ہے کہ انتظامیہ میں موجود لوگوں کو وقت پر بولنا چاہئے۔منموہن سنگھ نے کہا کہ دہلی میں 2012میں نربھیاسانحہ کے بعد کانگریس پارٹی اوران کی سرکارنے ضرورقدم اٹھائے تھے اورعصمت دری کے معاملے کولیکرقانون میں بدلاؤ کیاتھا۔

 

 

عیاں رہے کہ اس سے ایک دن پہلے کانگریس صدر راہل گاندھی نے پی ایم سے خاموشی توڑنے کی اپیل کی تھی۔راہل گاندھی نے کہا تھا کہ پورا ملک ان کے بولنے کا انتظار کر رہا ہے۔جمعرات کی رات کو راہل گاندھی نے دہلی کے انڈیا گیٹ پر کینڈل مارچ نکال کر اناؤ اور کٹھوعہ کے واقعے پر مخالفت درج کروائی۔

 

یہ بھی پڑھیں   جنسی استحصال معاملہ:آسا رام کو جیل میں ہی سنایا جائے گا فیصلہ
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *