امن، رواداری، دہشت گردی اور موسمیاتی تبدیلی کے لئے مہاتما گاندھی کی تعلیمات اہم: کووند

Share Article

صدر رام ناتھ کووند نے ملک اور دنیا کے سامنے کھڑے امن، رواداری، دہشت گردی اور موسمیاتی تبدیلی جیسے تمام مسائل کے لئے مہاتما گاندھی کی تعلیمات کو اہم بتایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گاندھی صرف ایک عظیم رہنما اوربا بصیرت شخصیت ہی نہیں تھے بلکہ ایک ایسی پروفائل تھے جس نے گزرے اصول اور اقدار کی پیروی کی۔

کووند نے جمعہ کو وگیان بھون میں احسان (کائنڈنیس) موضوع پر منعقد پہلے ورلڈ یوتھ کانفرنس کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم گاندھی کو ٹائم مشین میں رکھ سکتے ہیں اور ان کو انسانی وجود کے کسی بھی دور میں لے جا سکتے ہیں، ہم انہیںبا اثر ہی پائیں گے۔ یہ اس وقت کے بارے میں بھی ہے جس میں ہم رہتے ہیں۔ گاندھی ہماری موجودہ وقت کے خدشات، امن اور رواداری، دہشت گردی اور موسمیاتی تبدیلی جیسی ضروریات کے لئے انتہائی اہم ہیں۔

صدر نے کہا کہ آج ہم دنیا میں جو جدوجہد اور تشدد کا سامنا کر رہے ہیں، وہ اکثر گہرے جڑ والے تعصبات پر مبنی ہیں۔ یہ ہمیں دنیا کوـ’ہم بمقابلہ ان‘ کے بائنری کے ذریعے دیکھتے ہیں۔ گاندھی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ہمیں، اپنے آپ کو اور اپنے بچوں کو ان لوگوں سے بات چیت اور وابستگی قائم کرنا چاہئے جنہیں ہم ‘ان’ کے طور پر بیان کرتے ہیں۔ گریٹر انٹریکشن ایک حساس فہم تیار کرنے کا بہترین طریقہ ہے، جو ہمیں اپنے تعصبات کو دور کرنے میں مدد کر سکتا ہے۔

کووند نے کہا کہ تعلیم بھی ہمارے تعصبات پر قابو پانے میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔ ہمیں اپنے تعلیمی نظام کی بنیاد، ہدف اوراپنا محاسبہ اور ترقی کرنے کی ضرورت ہے۔ تعلیم کو صرف خواندگی سے باہر لے جانے کی ضرورت ہے۔ تعلیم کو اپنے اندر سنجیدہ فکر اور دوسروں کے مصائب کے تئیں ہمدردی یا تعلقات بنانے کے لئے اپنی اندرونی طاقت پیدا کرنے کی نوجوان کو سہولت اور چیلنج دینی چاہئے۔ ہمیں نوجوانوں کو تعلیم یافتہ بنانے کی ضرورت ہے تاکہ وہ کلاس اور نسل کے حدود کو توڑ سکیں ۔ ہمیں ضرورت ہے کہ ہم پڑھے لکھے ناانصافی اور عدم مساوات کے حل تلاش کرنے کے لئے تعلیم یافتہ اور تخلیقی بنے۔ ہمیں ایک ایسی تعلیم کی ضرورت ہے جو ہمارے جذبات اور ہماری روح کو چھو سکے۔

صدر نے کہا کہ اس کانفرنس کے ذریعے دنیا بھر کے نوجوان لیڈر ایک پلیٹ فارم پر متحد ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ نوجوان لیڈر اور ان کے جیسے لاکھوں مرد اور خواتین ہماری دنیا کوہمدرداور پرامن بنانے میں سب سے بڑے حصہ دار ہیں۔ انہوں نے اعتماد کا اظہار کیا کہ اس کانفرنس میں نوجوان لیڈر جو سیکھتے ہیں اور تجربہ کرتے ہیں، ان میں سے تمام کو ان کی زندگی کے لئے احسانمند اور ہمدردی کاسفیر بننے کے لئے حوصلہ افزائی کرے گا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *