سالگرہ پرخاص:مادھوری دکشت نے دلکش اداؤں سے دیوانہ بنایا

Share Article

madhuri

بالی ووڈ کی سینئراداکارہ مادھوری دکشت آج(15مئی)اپنا جنم دن منارہی ہیں۔بالی ووڈ ادکارہ مادھوری دکشت کویوں ہی دھک دھک گرل نہیں کہی جاتیں۔ ان کی ہر ایک فلم نے لاکھوں، کروڑوں فینس کو دیوانہ بنا دیا۔ بالی ووڈ میں مادھوری دکشت کا نام ایک ایسی اداکارہ کے طور پر لیا جاتا ہے جنہوں نے اپنی دلکش اداؤں سے تقریباً تین دہائیوں تک ناظرین کے دلوں میں اپنی خاص شناخت قائم رکھی۔مادھوری دکشت کی پیدائش 15 مئی 1967 کو ممبئی میں ایک متوسط طبقہ کے مراٹھی برہمن خاندان میں ہوئی۔انہوں نے ابتدائی تعلیم ممبئی سے حاصل کی۔اس کے بعد مادھوری نے ممبئی یونیورسٹی میں‘مائکرو بایولوجسٹ‘ بننے کے لیے داخلہ لے لیا۔اس دوران انہوں نے تقریباً آٹھ برس تک کتھک ڈانس کی تربیت بھی حاصل کی۔
مادھوری دکشت نے اپنے فلمی کیریئر کا آغاز 1984 میں راج شری پروڈکشن کے بینر تلے بنی فلم ’ابودھ‘ سے کیا لیکن کمزورا سکرپٹ اور ہدایت کی وجہ سے فلم باکس آفس پر بری طرح ردکردی گئی۔سال1984 سے 1988 تک وہ فلموں جگہ بنانے کیلئے جدوجہد کرتی رہیں۔

madhuri-dixit
مادھوری دکشت کی قسمت کا ستارہ سال 1988 میں آئی فلم ’تیزاب’سے چمکا۔یہ فلم باکس آف پر زبردست ہٹ ثابت ہوئی۔اس فلم میں مادھوری دکشت نے انل کپور کی محبوبہ کا کردار اداکیاتھا۔فلم میں ان پر فلمایا گیا نغمہ‘ایک، دو تین‘ ان دنوں سامعین کے درمیان کافی مقبول ہوا تھا۔

madhuri-anil
فلم کی کامیابی کے بعد مادھوری دکشت فلم انڈسٹری میں صحیح شناخت حاصل کرنے میں کسی حد تک کامیاب ہو گئیں۔اسی برس انہیں ونود کھنہ کے ساتھ فلم ’دیاوان‘ میں کام کرنے کا موقع ملا لیکن اس سے انہیں کچھ خاص فائدہ نہیں ہوا۔15 مئی کو اپنا جنم دن منا رہیں مادھوری دکشت نے اپنے کیریئر میں ویسے تو کئی بہترین اور یادگار فلمیں دی ہیں لیکن ایک رول ایسا تھا جسے کرنے کا افسوس مادھوری دکشت کو آج بھی ہے۔

یہ بات اس دور کی ہے جب ونود کھنہ نے فلموں میں اپنی دوسری اننگز شروع کی تھی۔ اس بار انہوں نے رومانٹک رول کرنے کے بارے میں سوچا۔اس وقت فیروز خان ایک فلم بنا رہے تھے دیاوان۔ جب ونود لوٹے تو فیروز خان نے ان کودیوان کا لیڈ رول آفر کر دیا اور اداکارہ کے لئے فیروز خان نے مادھوری سے رابطہ کیا۔

salman-madhuri1
مادھوری دکشت کی عمر اس وقت 21 سال تھی جبکہ ونود کھنہ 42 کے تھے۔ انڈسٹری میں جدوجہد کر رہیں مادھوری نے اس وقت فلم کے لئے ہاں تو کر دی لیکن ان کویہ ملال تھا کہ ہیرو عمر میں کافی بڑا ہے۔بہرحال، فلم کی شوٹنگ شروع ہوئی۔مادھوری کو کیا پتہ تھا کہ اس فلم میں ان کے ساتھ کچھ ایسا ہوگا جسے وہ زندگی بھر نہیں بھول نہیں پائیں گی۔

فلم میں مادھوری اور ونود کے کچھ انٹیمیٹ اورلپ لاک سین تھے۔سب کو لگ رہا تھا کہ شاید مادھوری یہ سین نہیں کریں گی۔مادھوری نے سبھی کو غلط ثابت کر دیا اور ونود کے ساتھ بڑی نرمی سے یہ سین دیے۔ جب فلم ریلیز ہوئی تو لوگوں نے سب سے زیادہ اس انٹیمیٹ سین کے بارے میں بات کی۔ اس وقت ویسے بھی اس طرح کے سین کرنا بڑی بات ہوتی تھی۔

madhuri-vinod
بعد میں ایک انٹرویو کے دوران مادھوری نے کہا تھا کہ فلم ’دیاوان‘ میں انہوں نے جو کسنگ(بوسہ) سین کئے، اس کا انہیں آج بھی پچھتاوا(افسوس) ہوتا ہے۔ انہیں وہ نہیں کرنا چاہئے تھا۔خیر، اس فلم کے بعد مادھوری نے اپنے کیریئر میں پھر کبھی اتنے بولڈ سین نہیں دیے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *