کاروباری کے فلیٹ میں گھس کر پولیس اہلکاروں کا ڈاکہ، 1.85 کروڑ لوٹے، 2 داروغہ معطل

Share Article

lucknow-policemen

لکھنؤ:گوسائیگنج تھانے کے داروغہ نے ہفتہ کو چھاپہ ماری کی آڑ میں ایک فلیٹ میں گھس کر کاروباری کے 1.85 کروڑ روپے پر ڈاکہ ڈال دیا۔ بندوق کی نوک پر ہوئی یہ واردات سی سی ٹی وی کیمرے میں قید ہو گئی۔ معلومات ملنے پر ایس ایس پی کلاندھی نیتھانی نے دو داروغہ،ان کے مخبر اور چار نامعلوم ساتھیوں کے خلاف یرغمال بنا کر ڈکیتی کی رپورٹ درج کروائی۔ دونوں داروغہ کو معطل کر پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔ فلیٹ سے روپے سے بھرا بیگ لے کر نکلے مخبر اور نامعلوم ساتھیوں کی تلاش ہو رہی ہے۔

پولیس نے بتایا کہ گوسائیں گنج تھانے کے داروغہ آشیش تیواری، پولیس لائنس میں تعینات ایس آئی پون مشرا،مخبر مدھوکر مشرا چار ددیگر لوگوں کے ساتھ ہفتے کی صبح سرسوا واقع اومیکس سٹی کے فلیٹ نمبر 104 میں کالا دھن پکڑنے کے لئے چھاپہ ماری کے بہانے گھس گئے۔

ان لوگوں نے وہاں موجود کان کنی کاروباری سلطانپور رہائشی انکت اگرہر، اشونی پانڈے، بلدی کھیڑا گوسائیں گنج کے ابھیشیک ورما، امیٹھی کے ابھیشیک سنگھ، گوالیار کے جتندر تومر، سچن، ردولی کے کلدیپ اور شبھم گپتا کو گن پوائنٹ پر لے لیا۔ تلاشی لینے پر فلیٹ میں روپے سے بھرے دو خانوں اور ایک غیر قانونی پستول ملی۔
بڑی رقم دیکھ کر پولیس نے محکمہ انکم ٹیکس کے افسروں کو اطلاع دی۔ افسر تھانے پہنچے تو انکت نے بتایا کہ فلیٹ میں3.38 کروڑ روپے رکھے تھے۔ یہ رقم انہیں باندہ میں اپنے کھدان پر پہچانی تھی، لیکن پولیس نے ایک بکس سے کافی رقم لوٹ لی۔ گنتی کرنے پر دونوں بکسوں میں 1.53 کروڑ روپے ملے۔

ذرائع کے مطابق فیض آباد رہائشی گرو سنگھ کے فلیٹ میں ٹھہرے کاروباریوں میں ایک کابینہ وزیر کا قریبی ہے، اسے تھانے میں لانے کی معلومات ملتے ہی وزیر نے افسروں کو فون لگایا۔ قریب دو گھنٹے تک کاروباریوں سے تھانے میں پوچھ گچھ کر رہی پولیس وزیر کا فون آتے ہی سکتے میں آ گئی۔ انکم ٹیکس افسروں نے فوری رقم کو قبضے میں لیا اور کاروباریوں سے خود پوچھ گچھ میں لگ گئے اور کالے دھن کا کوئی ثبوت نہ ملنے سے پولیس کا کھیل بگڑ گیا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *