کولکاتہ کی عدالت نے ششی تھرور کے خلاف جاری کیا گرفتاری وارنٹ

Share Article

کولکاتہ کی میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کورٹ (بینک شال عدالت) نے سینئر کانگریس لیڈر اور ترواننت پورم سے ممبر پارلیمنٹ ششی تھرور کے خلاف گرفتاری وارنٹ جاری کر دیا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ سال 2018 میں تھرور نے ایک متنازعہ بیان دیتے ہوئے مرکزی حکومت پر بھارت کو ’’ہندو پاکستان‘‘ بنانے کا الزام لگایا تھا۔ ان کے اس متنازعہ بیان کے خلاف سمت چودھری نام کے ایڈووکیٹ نے کولکاتہ کی بینک شال کورٹ میں ان کے خلاف مقدمہ دائر کیا تھا۔ منگل کے روز معاملے کی سماعت ہونی تھی جس میں تھرور کو موجود رہنے کے لئے کہا گیا تھا لیکن وہ حاضر نہیں ہوئے۔ لہٰذا کورٹ نے ان کے خلاف گرفتاری وارنٹ جاری کیا ہے۔

کیا ہے معاملہ
واضح ہو کہ 11 جولائی، 2018 کو تھرور نے کہا تھا کہ اگر 2019 لوک سبھا انتخابات میں بی جے پی کامیاب ہوتی ہے تو وہ بھارت کو ‘ہندو پاکستان’ بنانے جیسے حالات پیدا کر دے گی۔ انہوں نے اپنے پارلیمانی حلقہ ترواننت پورم میں ایک پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ بی جے پی ایک نیا آئین لکھے گی، جو ہندوستان کو پاکستان جیسے ملک میں تبدیل کرنے کا راستہ صاف کرے گا۔ جہاں اقلیتوں کے حقوق کی خلاف ورزی کی جائے گی، ان کا کوئی احترام نہیں ہو گا۔
ان کے اس بیان کی شدید تنقید ہوئی تھی۔ بعد میں ایڈووکیٹ چودھری نے کولکاتہ کی اس کورٹ میں ان کے خلاف مقدمہ کیا تھا جس پر سماعت چل رہی ہے۔ تھرور کا موقف جاننے کے لئے کورٹ نے انہیں آج ہونے والی سماعت میں شامل ہونے کے لئے کہا تھا لیکن اس معاملے میں جتنی بھی سماعت ہوئی ہے، اس میں سے کسی میں بھی تھرور حاضر نہیں ہوئے، جس کے بعد انہیں گرفتار کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *