کیجریوال کا مایاوتی کو جواب- زمین مرکز کے قریب، مندر گرانے میں ہمارا ہاتھ نہیں

Share Article

بدھ کی صبح اس مسئلے پر بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی نے دہلی اور مرکزی حکومت پر حملہ بولا تھا، اب دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ان کا جواب دیا ہے۔

راجدھانی دہلی کے تغلق آباد میں سنت روی داس مندر گرائے جانے پر سیاست تیز ہو گئی ہے۔ بدھ کی صبح اس مسئلے پر ٹویٹ کرتے ہوئے بہوجن سماج پارٹی BSP سربراہ مایاوتی نے دہلی اور مرکزی حکومت پر حملہ بولا تھا، اب دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ان کا جواب دیا ہے۔کیجریوال نے ٹویٹ کر لکھا کہ دہلی میں زمین مرکز کے تابع آتی ہے، ایسے میں مندر گرائے جانے میں ہماری حکومت کا کوئی ہاتھ نہیں ہے۔

دراصل، مایاوتی نے بدھ کی صبح ٹویٹ کر لکھا تھا کہ مرکز اور دہلی حکومت کی ملی بھگت سے تغلق آباد علاقے میں بنا سنت روی داس مندر گروايا گیا ہے، ہم اس کی مخالفت کرتے ہیں۔

اب اس پر جواب دیتے ہوئے اروند کیجریوال نے ٹویٹ کیا، ‘مایاوتی جی، مندر کے گرائے جانے سے ہم سب لوگ انتہائی پریشان ہیں۔ اس کا سخت مخالفت کرتے ہیں مجھے افسوس ہے کہ آپ مرکز کے ساتھ اس کے لئے ہم کو مجرم مانتی ہیں۔ دہلی میں زمین مرکزی حکومت کے تابع آتی ہے، ہماری حکومت کا اس مندر کے گرائے جانے میں کوئی ہاتھ نہیں ہے۔

آپ کو بتا دیں کہ سپریم کورٹ کے حکم کے بعد دہلی ڈیولپمنٹ پرادھركر DDA نے تغلق آباد واقع سنت روی داس مندر کو مسمار کر دیا تھا۔ اسی کے چلتے دلت سماج میں ناراضگی ہے۔ اس ناراضگی کا اثر نہ صرف دہلی بلکہ پنجاب میں بھی دیکھنے کو مل رہا ہے۔

بدھ کو ہی پنجاب میں کئی شہروں میں دلت سماج نے پنجاب بند بلایا تھا، جس کا اثر جالندھر، گرداس پور، ہوشیارپر جیسے بڑے شہروں میں دیکھنے کو مل رہا تھا. کئی جگہ اس واقعہ کے خلاف احتجاج بھی ہوا، جہاں پولیس کو ہوائی فائرنگ کرنی پڑی۔

اس مسئلے پر بہوجن سماج پارٹی کا مطالبہ تھا کہ مرکز ریاستی حکومت باہمی رضامندی سے ان مندر دوبارہ تعمیر کروائیں۔ مقامی لوگوں کو ماننا تھا کہ یہ سائٹ بہت پرانے سال تھا اور ان کی منظوری تھی۔ لیکن جہاں پر یہ مذہبی مقام تھا، اس کے ارد گرد DDA نے باؤنڈری کروا دی تھی۔ یہ مسئلہ گزشتہ کافی وقت سے عدالت میں تھا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *