موت کے ایک سال کے بعد عبدالکریم تیلگی بری

abdul karim telgi

تیلگی کو نومبر2001میں اجمیر سے گرفتار کیا گیا تھا۔ وہ گزشتہ20سالوں سے ذیابیطس اور ہائی بلڈ پریشر میں مبتلا تھا۔ کروڑوں روپے کے گھوٹالوں میں ملزم قرار دیئے گئے تیلگی کی لمبی بیمار کے بعد 26بیمار کے بعد 26اکتوبر کو بنگلورکے ایک اسپتال میں موت ہوگئی تھی۔

موت کے ایک سال بعد 20ہزار کروڑو روپے کے اسٹانپ پیپر گھوٹالے میں ملزم قرار دیئے گئے عبدالکریم تیلگی کو بری کردیاگیاگیا۔مہاراشٹریہکے اس مشہور گھوٹالے میں آٹھ لوگوں کو بھی بری بری کیا گیا ہے۔ ناسک کی ایک عدالت نے ثبوتوں کی کمی کی وجہ سے سبھی ملزموں کو بری کردیا۔ وہیں موت کے بعد تیلگی کے خلاف گھوٹالے کے الزام کو ہٹا دیا گیا ہے۔ فرضی اسٹانپ پیپر گھوٹالے میں اسے 30برس قید کی سزا سنائی گئی تھی اور وہ بنگلور کے پاراپپانا اگرہارا سینٹرل جیل میں سزا کاٹ رہا تھا۔ اس پر 202کروڑ روپےکا جرمانہ بھی لگایا گیا تھا۔

 

کیوں روکا اپوزیشن نے راجیہ سبھا میں طلاق ثلاثہ بل کو

معاملے کی سنوائی کر رہے ضلع جج پی آر دیش مکھ نے یہ فیصلہ سوموار کو سنایا۔ ریلوے سورکشا بل کے افسر اور اسٹاپ بھی اس معاملے میں ملزم تھے۔ بتادیں کہ معاملے کی سنوائی کے دوران ہی کروڑوں روپے کے فرضٰ اسٹانپ پیپر گھوٹالے کے ملزم تیلگی کا پچھلے سال اکتوبر میں بنگلور کے ایک سرکار اسپتال میں انتقال ہو گیا تھا۔ اس کے جسم کے سبھی حصے کام کرنا بند دیئے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *