کنہیاکمارکودہلی ہائی کورٹ سے بڑی راحت، جے این یوانتظامیہ کودھچکا

Share Article

kanhaiya

جے این یوکے سابق طلبایونین کے صدر علم کنہیا کمارکودہلی ہائی کورٹ سے بڑی راحت ملی ہے۔دراصل،دہلی ہائی کورٹ نے جے این یوکے سابق طلبایونین کے صدر علم کنہیا کمار کے خلاف انتظامیہ کے ذریعے لگائے گئے مجرمانہ کارروائی پر رو لگا دی ہے۔ہائی کورٹ کے فیصلے سے جے این یو انتظامیہ کیلئے بڑا دھچکا مانا جارہاہے۔ہائی کورٹ نے اس حکم نامے کوردکردیاہے جس میں کنہیاکمارپر10ہزارروپے کاجرمانہ لگایاگیاتھا۔جے این یو نے حال ہی میں کنہیاکمار پرضابطہ شکنی کا الزام لگاتے ہوئے جرمانہ عائد کیاگیاتھا۔ ہائی کورٹ نے کہا کہ جے این یو کا کنہیا کمار کوسزا دینے کا  فیصلہ غیر قانونی ہے اور بے وجہ ہے۔

قابل غور ہے کہ جے این یو کی اعلی سطحی جانچ کمیٹی نے یونیورسٹی احاطے میں 9فروری 2016 کے نعاملے میں عمر خالد کے اخراج اور کنہیا کمار پر لگائے گئے 10ہزار روپئے کے جرمانے کی سزا کو برقرار رکھا تھا۔جے این یو پینل نے افضل گرو کو پھانسی دینے کے خلاف کامپلیکس میں منعقد ایک پروگرام کے معاملے میں 2016 میں خالد اور دو دیگر طلبا کے اخراج اور طلبا تنظیم کے اس وقت کے صدر کنہیا کمار پر 10ہزار روپئے کا جرمانہ لگایا تھا۔اس دن مبینہ طور پر ملک مخالف نعرے بازی ہوئی تھی۔پانچ رکنی پینل نے 13 دیگر طالب علموں کو انضباطی قوانین کی خلاف ورزی کرنے کے پر جرمانہ لگایا تھا۔اس کے بعد طلبا نے دہلی ہائی کورٹ کا رخ کیاتھا۔عدالت نے یونیورسٹی کو پینل کے فیصلے کا جائزہ لینے کیلئے معاملہ اپیلی اتھارٹھی کے سامنے رکھنے کی ہدایت دی تھی۔ذرائع کے مطابق خالد اور کنہیا کے معاملے میں پینل نے اپنا فیصلہ بر قرار رکھا۔

 

 

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *