جے این یو انتظامیہ 5 جنوری کے تشدد سے متعلق سی سی ٹی وی فوٹیج دہلی پولیس کو سونپے: ہائی کورٹ

Share Article

دہلی ہائی کورٹ نے جے این یو انتظامیہ کو ہدایت دی ہے کہ وہ پانچ جنوری کے روز ہوئے تشدد سے متعلق سی سی ٹی وی فوٹیج دہلی پولیس کو سونپے۔ کورٹ نے جے این یو انتظامیہ کو جلد ثبوت فراہم کرنے کا حکم دیا۔ کورٹ نے دہلی پولیس کو ہدایت دی کہ وہ وہاٹس ایپ گروپ فرینڈس آف آر ایس ایس اور یونٹی اگینسٹ لیفٹ کے گروپ کے ارکان کے موبائل فون فوری طور پر ضبط کریں۔

پیر کے روز عدالت نے فیس بک، گوگل اور وہاٹس ایپ کو نوٹس جاری کیا تھا۔ سماعت کے دوران دہلی پولیس نے کہا تھا کہ جے این یو انتظامیہ کو سی سی ٹی وی فوٹیج کے ساتھ مزید معلومات دینے کے لئے خط لکھا گیا ہے لیکن جے این یو انتظامیہ کی طرف سے اب تک خط کا کوئی جواب نہیں دیاگیا ہے۔ درخواست جے این یو کے تین پروفیسروں نے دائر کی تھی۔ درخواست میں کہا گیا تھا کہ تقریب کے دوران سی سی ٹی وی فوٹیج، تشدد سے منسلک اطلاعات اور ثبوت کے تحفظ کے لئے ہدایات جاری کئے جائیں۔ درخواست میں کہا گیا تھا کہ ان وہاٹس ایپ گروپ کی اطلاعات کو محفوظ کیا جائے، جن کے ذریعے اس حملے کی منصوبہ بندی کا شبہ ہے۔ درخواست میں کہا گیا تھا کہ انہیں خدشہ ہے کہ انتظامیہ کے تعاون سے ان ثبوتوں تباہ کیا جا سکتا ہے۔

غور طلب ہے کہ پانچ جنوری کو جے این یو میں ہوئے تشدد میں کچھ نقاب پوش لوگوں کا ہاتھ ہونے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔ پولیس نے ابھی تک اس معاملے میں کوئی گرفتاری نہیں کی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *