ثقافتی تقسیم کی طرف بڑھ رہا ہے ملک: گری راج سنگھ

 

آبادی کنٹرول کے لئے قانون بنانے کے حق میں بی جے پی کارکنان کی مہم

 

آبادی کنٹرول قانون بنانے اور اس کے لئے لوگوں سے آگے آنے کی اپیل کرنے والے فائر برانڈ لیڈر بیگو سرائے کے ایم پی اور مرکزی وزیر گری راج سنگھ نے بے حساب بڑھتی آبادی کے معاملے پر ایک بار پھر بیان دے کر سرخیوں میں ہیں۔واضح رہے کہ گری راج سنگھ اپنے متنازعہ بیانات کے لئے معروف ہیںخاص طور پر ملک کی اقلیتوں کے تعلق سے ان کے بیانات اشتعال انگیز ہوتے ہیں۔تازہ اطلاع کے مطابق انہوں نے عالمی یوم آباد کے تناسب سے ایک ٹویٹ کرکے بڑھتی ہوئی آبادی پر ملک کو آگاہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ کہ ملک 1947 کی طرح ثقافتی تقسیم کی طرف بڑھ رہاہے۔

 

عالمی یوم آبادی کے موقع پر جمعرات کو ٹویٹ کر انہوں نے ایک خاص طبقے پر نشانہ سادھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مذہبی رکاوٹ کی وجہ سے آبادی کنٹرول میں رکاوٹ آ رہی ہے۔ ہندوستان میں آبادی کی بڑھتی ہوئی شرح معیشت، سماجی ہم آہنگی اور وسائل کے توازن بگاڑ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان 1947 کی طرز پر ثقافتی تقسیم کی طرف بڑھ رہا ہے۔تمام سیاسی جماعتوں کو ساتھ ہوکر آبادی کنٹرول قانون کے لئے آگے آنا ہوگا۔

 

گری راج سنگھ کے ٹویٹس کرتے ہی ایک صارف مالتی نے لکھا ہے کہ ایک امید اسی حکومت سے کر سکتے ہیں۔ یہ بہت خطرناک مسئلہ ہے۔ آبادی کنٹرول کے ساتھ بہن بیٹی کی حفاظت کا بھی قانون سست اور دکھاوٹی نہیں، بلکہ سخت قانون بنانا پڑے گا۔

 

دوسری طرف بی جے پی نے چھوٹا خاندان خوش خاندان کا نعرہ دیتے ہوئے آبادی کنٹرول قانون بنانے کی حمایت کے لئے بیگو سرائے میں دستخط مہم شروع کی ہے۔جمعرات کی صبح بی جے پی کے سابق ضلع صدر سنجے سنگھ، بی جے پی یووا مورچہ کے لیڈر مرتیونجے کمار ویریش کی قیادت میں یہ مہم شروع کی گئی ہے۔ اس مہم کے تحت جے ڈی یو لیڈر ارون مہتو، بی جے پی کے سینئر لیڈر وششٹھ نارائن سنگھ سمیت سینکڑوں لوگوں نے قانون بنانے کی حمایت میں دستخط کئے۔ ویریش نے بتایا کہ یہ مہم آگے بھی جاری رہے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *