اردغان کے خلاف داؤد اوغلو کی نئی جماعت تشکیل کے مرحلے میں

 

ترکی کے سابق وزیراعظم احمد داؤد اوغلو آئندہ چند ہفتوں کے دوران ایک نئی جماعت تشکیل دیں گے۔ اوغلو جو ایک وقت صدر رجب طیب اردغان کے قریب ترین حلیف تھے ، انہوں نے ستمبر میں جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی سے علاحدگی اختیار کر لی تھی۔ انہوں نے پارٹی پر آزادی کو سبوتاژ کرنے کا الزام عائد کیا تھا۔ تفصیلات کے مطابق نئی جماعت کی تاسیس کے سلسلے کہا گیا کہ “توقع ہے کہ اوغلو کی جانب سے تشکیل دی جانے والی نئی جماعت وزارت داخلہ کو درخواست دے گی۔ جماعت کی سرکاری طور پر تاسیسی چند ہفتوں میں ہو جائے گی۔

مذکورہ ذریعہ کے مطابق بعض سابق سیاسی شخصیات اور سرکاری سیکٹر میں سینئر ذمے داران داؤد اوغلو کی جماعت میں اپنا کردار ادا کریں گے۔ انہوںنے مزید بتایا کہ “نئی پارٹی کی تشکیل حتمی مراحل میں ہے۔ ہم نے انقرہ میں عمارتیں اور صدر دفتر جب کہ استنبول میں ایک عارضی مرکز کرائے پر حاصل کر لیا ہے۔داؤد اوغلو نے 13 ستمبر کو جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی کی رکنیٹ سے استعفا دے دیا تھا جو 2002 سے ترکی پر حکمرانی کر رہی ہے۔ اوغلو کا کہنا تھا کہ حکمراں جماعت ملک کے مسائل حل کرنے کی قدرت کھو چکی ہے اور جماعت کے اندر داخلی مکالمے کی اجازت باقی نہیں رہی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *