ہر معاملے میں راہل سے بیس، پھر بھی سندھیا کے لئے نہیں کوئی راہ: سارنگ

Share Article

کانگریس کے سینئر لیڈر جیوتی رادتیہ سندھیا کو لے کر سیاسی گلیاروں میں کئی طر ح کی قیاس آرائیاں چل رہی ہیں، جن میں ان کے ریاستی کانگریس صدر بننے سے لے کر بھارتیہ جنتا پارٹی میں شامل ہونے کے قیاس تک شامل ہیں۔ اسی درمیان بی جے پی لیڈر اور سابق وزیر وشواس سارنگ نے سندھیا کو لے کر بیان دیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ سندھیا ہر معاملے میں کانگریس صدر راہل گاندھی سے بیس ہیں، لیکن ان کے لئے کانگریس میں کوئی راستہ نہیں بچا ہے۔

سابق وزیروشواس سارنگ نے جمعہ کے روز میڈیا سے بات چیت میں سینئر لیڈر جیوتی رادتیہ سندھیا سے لے کر گاندھی خاندان تک کے بارے میں چرچہ کی۔ انہوں نے اشاروں ہی اشاروں میں سندھیا کو صدر کی کمان سونپنے کی وکالت کی اور گاندھی خاندان پر جم کر حملہ بولا۔ سارنگ نے کہا کہ سندھیا کے لئے پارٹی میں کوئی راستہ نہیں بچا ہے۔ وہعزت اور وقار میں ہر حساب سے راہل سے بیس ہیں، پھر بھی کانگریس میں سندھیا کے ساتھ خراب رویہ ہو رہا ہے۔ سندھیا ریاست کی سیاست میں مداخلت نہ کریں، اس لیے انہیں مدھیہ پردیش سے ہٹا کر دوسری ریاست بھیج دیا گیا ۔یہ ان کی توہین ہے۔

سارنگ نے کہا کہ کانگریس لیڈروں نے پہلے سندھیا کی توہین کی اور اب ان کے خیمے کے وزراء کی توہین کر رہے ہیں۔ سارنگ نے کہا کہ کانگریس میں صرف نہرو خاندان کے لوگوں کو ہی اقتدار ملے گا، یہ طے ہے۔ غور طلب ہے کہ سارنگ کا بیان ایسے وقت میں آیا ہے جب سندھیا کو مہاراشٹر اسمبلی انتخابات کے لئے اسکریننگ کمیٹی کا صدر بنایا گیا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *