کشمیر کو لے کر عمران-ٹرمپ مذاکرات: امریکی میڈیا کا ٹرمپ پر طنز

Share Article
Trump says Modi asked for US mediation on Kashmir

 

واشنگٹن، 23 جولائی (ہ س)۔ افغانستان اور کشمیر کے معاملات میں ڈونالڈ ٹرمپ اور عمران خان کے درمیان وائٹ ہاؤس میں ہوئی بات چیت پر امریکی میڈیا نے تیکھے طنز کئے ہیںکہ ٹرمپ کے ’قول اور فعل‘ایک بار پھر شک کے گھیرے میں آگیاہے۔ امریکی میڈیا نے اپنے ہی صدر کے طرز عمل، رویے اور بات چیت کے طور طریقے پر سخت تبصرے کئے ہیں۔

Image result for american media

حکومت ہندسات دہائیوں سے کشمیر کو اپنا اٹوٹ حصہ بتاتی رہی ہے۔ اس معاملہ میں ہندوستان کی دہائیوں سے واضح پالیسی رہی ہے کہ ایسے تمام اہم مسائل پر پاکستان کے ساتھ بات چیت دوطرفہ بنیاد پر ہونا چاہئے، جبکہ افغانستان کے معاملے پر اس وقت تک پرامن حل نکال پانا ممکن نہیں ہے، جب تک عسکریت پسند تنظیم طالبان افغانستان کیمنتخب حکومت سے براہ راست بات چیت کرنے کو تیار نہیں ہو جاتی۔

’وال سٹریٹ جرنل‘ نے شہ سرخیوں میں لکھا ہے’کشمیر معاملے میں ٹرمپ کی ثالثی کی تجویز، ہندوستان کیا اعتراض‘۔ عمران نے افغانستان معاملہ میں ٹرمپ کو جھکتے دیکھ کر کشمیر کا راگ الاپنا شروع کر دیا اور دنیا میںسپر پاور ملک کے ایک عظیم رہنما کے طور پر ٹرمپ کو ثالثی قبول کرنے کی دعوت دے ڈالی۔ اس پر ٹرمپ نے بھی اپنی پیٹھ تھپتھپاتے ہوئے یہ شامل کر دیا کہ’ہندستانی وزیر اعظم نریندر مودی دو ہفتے پہلے جب ان سے ملے تھے، تب انہوں نے بھی ان سے ثالثی کی تجویز دی تھیلیکن ٹرمپ کے اس بیان کے تھوڑی ہی دیر بعد وزارت خارجہ میں ترجمان رویش کمار نے ٹرمپ کے اس بیان کو بے بنیاد بتا دیا۔ یہی نہیں، اخبار نے ہندوستانی ترجمان کے بیان کی مکمل وضاحت کرتے ہوئے یہ بھی لکھا ہے کہ کشمیر معاملے میں ہندوستان کی دہائیوں سے یہ واضح پالیسی رہی ہے کہ ایسے تمام اہم معاملات میں دو طرفہ بات چیت کی جائے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *