مقبوضہ کشمیر میں عمران خان کے جلسے سے قوم پرست تنظیمیں برہم

Share Article

جموں و کشمیر سے دفعہ 370منسوخ کئے جانے کے بعد ہند و پاک کے درمیان کشیدگی عروج پر ہے۔ ہندوستانی حکومت کے فیصلے کے خلاف عمران خان کی سر گرمیاں جاری ہیں۔گزشتہ دنوں عمران خان نے ہندوستانی حکومتی اقدام کے خلاف پی او کے مقبوضہ کشمیر کے مظفر آباد میں ایک اجلاس کا انعقاد کیا جس میں انہوں نے یہ باور کرانے کی کوشش کی کہ کشمیری اس فیصلے سے ناراض ہیں اور وہ پاکستان کے موقف کی حمایت کر رہے ہیں۔مگر جلسہ عام پر متنازعہ علاقے کو خود مختاری دینے کے حامی قوم پرست کشمیری چراغ پا ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت اس طرح کے جلسے کر کے حق خود ارادیت کی تحریک کو نقصان پہنچا رہی ہے۔

عمران خان کے جلسے پر کشمیر میں قوم پرست سیاسی جماعتیں شدید تنقید کر رہی ہیں۔ قوم پرست جماعتوں کے حامیوں نے آج مظفر آباد میں عمران خان کے جلسے گاہ سے دور مظاہرے کرنے کی بھی کوشش کی۔ذرائع کے مطابق اس کوشش پر کچھ سیاسی کارکنان کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ مظاہرے کی کوشش کرنے والی جماعتیں کشمیر کی خودمختاری کا پرچار کرتی ہیں۔ خودمختاری کے اس مقصد کو مزید بڑھانے کے لیے بارہ سے زائد کشمیری قوم پرست اور ترقی پسند جماعتوں کا ایک اتحاد پیپلز نیشل الائنس کے نام سے بھی حال ہی میں بنا ہے، جو الحاق کا موقف رکھنے والی جماعتوں کے سخت مخالف ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *