ہاشم پورہ کے باقی 11مجرمین کا ہنوز انتظار

Share Article

hashimpura caseہاشم پورہ قتل عام معاملہ کے باقی گیارہ مجرمین کاہنوز انتظار ہے جب کہ گزشتہ 31اکتوبر کو دہلی ہائی کورٹ کے ذریعے سنائے گئے فیصلہ میں پی اے سی کے کل16جوانوں کو مجرمین قرار دیا گیا تھا۔ عیاں رہے کہ ان میں سے ایک کا اس دوران انتقال ہوگیا تھا۔
اس طرح 15مجرمین میں پی اے سی کے جن 4افراد نے کل سرینڈر کرنے کی آخری تاریخ کو دہلی تیس ہزاریکورٹ میں خود سپردگی کی وہ سمیع اللہ خاں، نرنجن لعل، مہیش پرساد سنگھ اور جئے پال سنگھ ہیں۔ خود سپردگی کے بعد انہیں جیل بھیج دیا گیا۔

 

ضرور پڑھیں

ہاشم پورہ متاثرین کو ملا انصاف

 

 

عیاں رہے کہ یہ وہی 4افراد ہیں جن کا بیان ہے کہ ہاشم پورہ سے 22مئی1987کو وہاں کے باشندوں کو مراد نگر لے جائی جارہی پی اے سی ٹرک URU1493میں وہ کل 19پی اے سی کے جوانوں میں ضرور شامل تھے مگر شروع ہی میں انہیں صوبیدار سریندر پال سنگھ کی ہدایت کے مطابق نیچے اتار دیا گیا تھا اور اپنے اپنے پی اسے سی کیمپ ٹینٹ میں واپس جانے کو کہا گیا تھا۔ دہلی ہائی کورٹ میں پی اے سی کی 41ویں بٹالین غازی آباد میں میس منشی گلبیش علی نے اس تعلق سے گواہی دی مگر عدالت نے اس تنہا گواہی کو ناکامی قرار دیتے ہوئے ان چاروں کو بھی مجرم قرار دیا۔ قابل ذکر ہے کہ کل19ملزمین تھے جن میں 3کا قبل ہی انتقال ہوچکا ہے۔

 

ضرور پڑھیں

سی بی آئی کی ساکھ کی نیلامی اصل ذمہ دار کون؟

 

غازی آباد کے لنک تھا نہ کے سب انسپکٹر پولس نے عدالت سے باقی 11مجرمین کو نوٹس دینے کے لیے وقت مانگا تھا جسے عدالت نے نہیں دیا اور سبھی کے خلاف غیر ضمانتی وارنٹ جاری کیا۔ آئندہ سماعت 29نومبر کو ہوگی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *