حزب اللہ کے مالیاتی ذرائع پر ضرب لگانے کے لیے 30 ممالک کا اتحاد

Share Article

دسمبر کے وسط میں ہالینڈ میں لا انفورسمنٹ کوآرڈینیشن گروپ (ایل ای سی جی) کے زیر اہتمام ایک بین الاقوامی اجلاس منعقد ہو رہا ہے جس میں لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ مالیاتی نیٹ ورک کو توڑنے اور تنظیم کی آمد کے ذرائع محدود کرنے کے لیے حکمت عملی وضع کی جائے گی۔ ہالینڈ میں ہونے والے اجلاس میں CHIP اقدام کو آگے بڑھایا جائے گا۔ یہ اصطلاح حزب اللہ کیمالیاتی نیٹ ورک کو محدود کرنے کے لیے تکنیکی ماہرین کے ہاں استعمال کی جاتی ہے۔پچھلے ہفتے امریکی خزانے نے CHIP اقدام کے پہلے اجلاس کی میزبانی کی جس کا مقصد حزب اللہ کے مالیاتی ذرائع کو خشک کرنے اور کثیر الجہتی تعاون کو مربوط کرنے کے ساتھ تہران کے حمایت یافتہ لبنانی حزب اللہ کے لیے مالی اعانت کے نیٹ ورک کو ختم کرنا ہے۔

18 اکتوبر کو امریکی محکمہ خارجہ کی پریس ریلیز کے مطابق مشرق وسطی ، امریکا ، یورپ ، ایشیا اور افریقہ کے 30 سے زائد ممالک کے نمائندوں نے 2019 کے موسم خزاں کے لیے عالمی بینک اور آئی ایم ایف کے اجلاسوں کے موقع پر شرکت کی تھی۔امریکی محکمہ خزانہ کے سیکرٹری برائے انسداد دہشت گردی اور مالی انٹلیجنس سیگل مینڈیلکر نے کہا کہ حزب اللہ دہشت گردی اور مسلح تشدد کے اپنے ایجنڈے کی مالی اعانت کے لیے دنیا بھر کے مالی معاونین کا ایک نیٹ ورک استعمال کررہی ہے۔حزب اللہ کے مالی وسائل پرضرب لگانے کے پروگرام’چیپ’ کے ذریعے عالمی برادری کو حزب اللہ کے خلاف متحد کرنے، حزب اللہ کے خلاف بین الاقوامی شراکت کو روکنے اور عالمی سطح پر حزب اللہ کو مالی وسائل سے استفادہ کرنیسے محروم کرنے کی کامیاب کوشش کی جا رہی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *