لکھنو میں حج کمیٹی ہاوس پر چڑھا بھگوا رنگ

Share Article
hajj-house-up
اترپردیش کی راجدھانی لکھنؤ میں وزیراعلیٰ آفس کے بعدیوپی حج ہاؤس کی دیوارکوبھگوارنگ سے رنگ گیاہے۔اب یوگی سرکارکی قیادت میں ریاست بھرمیں بھگوا رنگ چڑھایا جارہا ہے۔اسکول اوربسوں کے بعداب یوگی سرکارنے لکھنؤمیں واقع حج ہاؤس کوبھگوارنگ میں رنگ دیاگیاہے۔اس سے پہلے حج ہاؤس کی دیواریں سفیداورہلکی ہرے رنگ میں تھیں، لیکن اب اس کی دیواروں پرگیروارنگ چڑھ رہاہے۔یوگی سرکارکے اس قدم پرسیاست شرو ع ہوگئی ہے۔اپوزیشن لیڈروں اورعلماء نے اس قدم کی مخالفت کی ہے۔ان کاکہناہے سرکاراس معاملے میں مذہبی جذبات کوکدیرنے میں لگ گئی۔عیاں رہے کہ اس قبل بھی اتردیش میں کافی جگہوں پرایسی کوششیں کی جاچکی ہیں۔
بھگوارنگ اب سرکاری محکموں کے سرچڑھ کربول رہاہے۔سی ایم یوگی کاپسندیدہ رنگ اب سرکاری بھونوں میں چڑھنے لگاہے، لیکن حیرت کی بات یہ ہے کہ اب افسرتھانے تک کوبھگوارنگ کورنگنے میں لگے ہیں۔ریاست میں کہیں پرتھانے کی بلڈنگ پربھگوارنگ چڑھ گیاہے ،توکہیں سبزی منڈی اورگڑمنڈی کوبھی بھگوارنگ میں رنگ دیاگیاہے۔
عیاں رہے کہ یوگی آدتیہ ناتھ کے وزیر اعلی بننے کے بعد سے ہی یوپی حکومتبھگوا رنگ پر کافی توجہ دے رہی ہے۔ اسی سلسلہ میں سکریٹریٹ بلڈنگ کو بھی بھگوا رنگ میں رنگا گیا تھا۔ یہاں تک کہ سرکاری پوسٹرس میں بھی بھگوا رنگ کا استعمال دیکھنے کو مل رہا ہے۔بتایاجارہے کہ بجنورکے افضل گڑھ تھانے کوپوری طرح سے بھگوارنگ سے رنگ دیاگیاہے۔
اس معاملے پراپوزیشن اوردیگرعلماء نے مخالفت کی ہے۔ وہیں وزیر محسن رضا نے یوگی حکومت کا دفاع کیا ہے۔ حج امور کے وزیر محسن رضا کا کہنا ہے کہ ایسے معاملات کو طول دینے کی ضرورت نہیں ہے۔ کیسریا رنگ توانائی کی علامت ہے ، اب بھون اچھا نظر آرہا ہے۔ اپوزیشن کے پاس کوئی بڑا مدعا نہیں ہے ، اس لئے وہ ایسے معاملات کو اچھال رہے ہیں۔
سماج وادی پارٹی کے ترجمان سنیل ساجن نے کہاکہ سرکاراپنی ناکامی چھپانے کیلئے اب رنگوں کاکھیل،کھیل رہی ہے۔ابھی تک توآشرم بھگوارنگ میں ہوتے تھے، آفس کی بلڈنگ نہیں۔انہو ں نے کہاکہ افسربھی چاپلوسی میں لگے ہیں۔یہ توطے ہے کہ رنگاسیارزیادہ دن نہیں چھپاپاتاہے۔ریاستی وزیرمحسن رضاکے بیان پرسنیل ساجن نے کہاکہ وہ صرف چاپلوسی کررہے ہیں۔اپنی کرسی بچانے کے خاطراس طرح کی باتیں کررہے ہیں۔محسن رضاکوفکرہے کہ کسی طرح کرسی بچی رہے۔ان کی کرسی توان کی حرکتوں کے باعث خطرے میں رہتی ہے۔ساجن نے مزیدکہاکہ اگراپوزیشن کے مدعانہیں ہے،تو سرکارکے پاس کون سا مدعاہے۔کیاوکاس ہورہاہے۔یوگی کے سی ایم بننے کے بعدسے ہی سرکارکیسریارنگ کوخاص توجہ دے رہی ہے۔سکریٹریٹ کوبھی بھگوارنگ سے رنگادیاگیاہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *