تین طلاق پرہوگی تین سال کی جیل ، نئے قانون کا مسودہ تیار

Share Article
triple-talaq
سپریم کورٹ کے ذریعہ تین طلاق کو غیر قانونی قرار دئے جانے کے بعد اب مودی حکومت نے تین طلاق پر پابندی سے متعلق بل کا مسودہ تیار کرلیا ہے۔تین طلاق پرمسودہ میں کہاگیاہے کہ ایک بارمیں تین طلاق غیرقانونی ہوگا اورایساکرنے والے شوہرکوتین سال کے جیل کی سزاہوسکتی ہے۔ این ڈی ٹی وی کے مطابق، ایک سرکاری افسرنے بتایاکہ مسودہ ’مسلم ویمنس میرج رائٹس پروٹیکشن بل‘یکم دسمبرکوریاستی حکومتوں کوان کی رائے جاننے کیلئے بھیجاگیاہے۔انہو ں نے کہاکہ ریاستی سرکاروں سے مسودے پرفوراً ردعمل دینے کوکہاگیاہے۔افسرنے کہاکہ سپریم کورٹ کے حکم کے بعدسرکارکامانناتھاکہ یہ رواج بندہوجائے گا،لیکن جاری ہے،اس سال فیصلے سے پہلے اس طرح کے طلاق کے 177معاملے، جبکہ فیصلے کے بعد66معاملے درج ہوئے ۔
مسودے کو سرمائی اجلاس میں پیش کئے جانے کا امکان ہے۔ذرائع کے مطابق سرکار کی جانب سے تشکیل دی گئی کمیٹی نے مسودہ کو حتمی شکل دینے کیلئے سبھی ریاستوں سے ان کا مشورہ طلب کیا ہے۔ اس قانون کا نام مسلم وومین پروٹیکشن آف رائٹس لا دیا گیا ہے۔
مسودہ کے مطابق نئے بل میں تین طلاق کو ناقابل ضمانتی جرم قرار دیا گیا ہے اور قصور وار پائے جانے پر تین سال کی قید ہوگی۔ علاوہ ازیں جرمانہ کا بھی بندوبست کیا گیا ہے۔ مسوہ کی خاص بات یہ ہے کہ متاثرہ خاتون کو معاوضہ دینے کا بھی بندوبست ہے۔
اطلاعات کے مطابق مرکزی حکومت نے بل تیار کرنے کی ذمہ داری راجناتھ سنگھ ، ارون جیٹلی ، سشما سوراج ، روی شنکر پرساد اور جتیندر سنگھ کو دی تھی۔ ذرائع کے مطابق بل کا ڈرافٹ تیار کرلیا گیا ہے اور سبھی ریاستوں کو اس ڈرافٹ پر اپنی رائے دینے کیلئے کہا گیا ہے۔ تاہم یہ قانون جموں و کشمیر پر نافذ نہیں ہوگا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *