دہلی یونیورسٹی طالب علم تنظیم (ڈوسو) کے سابق صدر شکتی سنگھ اپنے سینکڑوں حامیوں کے ساتھ اتوار کو بی جے پی میں شامل ہوئے۔پارٹی ہیڈکوارٹر میں ریاستی صدر منوج تیواری کی موجودگی میں شکتی سنگھ اور ان کے حامیوں نے پارٹی کی رکنیت حاصل کی۔ اس سے سابق شکتی سنگھ اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد (اے بی وی پی) سے ڈوسو کے صدر اور نائب صدر رہے چکے ہیں۔
Image result for Former Dusu president Shakti Singh joins BJP with his supporters
منوج تیواری نے کہا کہ شکتی سنگھ کو دہلی کے طالب علموں اور نوجوانوں کا بہت پیار ملا ہے۔ آج وہ اے بی وی پی سے بی جے پی میں داخل ہو رہے ہیں۔ مجھے پورا یقین ہے کہ مستقبل میں شکتی اور ان کے ساتھیوں کی جو سوچ ہے، آنے والے دنوں میں اس کے اچھے نتائج دیکھنے کو ملیں گے۔ بی جے پی اس نوجوان سوچ کا احترام کرتی ہے۔
Image result for Former Dusu president Shakti Singh joins BJP with his supporters
شکتی سنگھ نے ایک مصرعہ چند سطریں “بلاوے نہیں بھیجے جاتے ملک کے ابھیمان میں، یووا خود چلتے آتے میدان میں “حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ملک اور دہلی کا نوجوان آج بی جے پی کے ساتھ کندھے سے کندھا ملاکر چلنے کو تیار ہے۔ شہریت ترمیم ایکٹ (سی اے اے) کی مخالفت میں جو نوجوان ٹی وی میں دکھائی دے رہا ہے وہ ذہنی طور پر معذور ہے۔ کچھ لوگوں کو یہ ہضم نہیں ہو پا رہا ہے کہ آخر کار ملک میں اتنے بڑے بڑے فیصلے کس طرح ہو گئے اور امن کس طرح برقرار ہے۔ سنگھ نے کہا کہ یہ ہماری اخلاقی ذمہ داری بنتی ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ قدم بہ قدم مل کر چلیں اور ان تمام منفی لوگوں کا منھ توڑ جواب دیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here