مشہور خطاط نسیم پینٹر کا انتقال 

Share Article
Naseen-Pentar
فن خطاطی سے دیوبند کانام روشن کرنے والے معروف اور مشہور پینٹر چودھری نسیم احمد کا طویل علالت کے سبب ان کے آبائی وطن چرتھاول میں انتقال ہوگیا۔ نسیم پینٹر کے انتقال کی خبر سے دیوبند اور دارالعلوم علاقہ میں غم کی لہر دوڑ گئی ،بڑی تعداد میں دیوبند سے لوگ ان کے جنازہ میں شرکت کرنے کی غرض سے ضلع مظفرنگر کے قصبہ چرتھاول پہنچے۔اسی سلسلہ میں ایک تعزیتی میٹنگ محلہ ابوالمعالی گدی واڑہ میں واقع جنت الرابعہ میں کیاگیا۔ جس کی صدارت سابق رکن پالیکا حافظ اقبال انصاری نے کی ۔ میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے مولانا عبدالرؤف نے کہاکہ نسیم پینٹر نے اپنے فن سے دیوبند کے نام کو مزید روشناس کرایا ۔انہوں نے اپنے فن میں مہارت حاصل کی اور دیوبند کے ساتھ ساتھ دور دراز علاقوں اردو رسم الخط کو پہنچانے اہم کردار ادا کیا۔
منور سلیم اولا حافظ محمد اقبال نے کہاکہ نسیم پینٹر کا تعلق دیوبند کے قریبی ضلع مظفرنگر کے قصبہ چرتھاول سے تھا اور وہ تعلیم حاصل کرنے کی غرض سے دارالعلوم دیوبند آکر تعلیم حاصل کی۔ تعلیم حاصل کرنے کے دوران ہی ان کا رابطہ اس دور کے مشہور انعام پینٹر سے ہوا اور ان ہی کی شاگردی میں انہوں نے اپنے فن پر مہارت حاصل کی اور اپنے فن سے دیوبند کے نام کو اردو رسم الخط میں بلندیوں تک پہنچایا۔ انہوں نے کہاکہ مرحوم اردو کے ساتھ ساتھ عربی اور انگلش رسم الخط میں بھی مہارت رکھتے تھے۔ بعد ازیں چودھری یونس نے بتایاکہ نسیم پینٹر گزشتہ تین دہائی ممبئی منتقل ہوگئے تھے اور اہل خانہ کے ساتھ و ہیں سکونت اختیار کرلی تھی،گزشتہ ایک سال قبل ڈاکٹروں نے انہیں مہلک مرض کینسر کی تشخیص کی،انہوں نے بتایاکہ چار ماہ قبل اپنی کیفیت کو دیکھتے ہوئے وہ اپنے آبائی گاؤں چرتھاول میں آگئے تھے،یہی انہوں نے 2؍ جنوری کو آخری سانس لی۔میٹنگ میں محمد جاوید،مستقیم پینٹر،عبدالرؤف عثمانی،فاروق عثمانی،عبیداللہ قلندر،طیب قاسمی وغیرہ موجود رہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *