غیر ملکی دوشیزائوں کے بعد بھی خالی بالی ووڈ کی دنیا

Share Article

پرینکا پریم تیواری
ہرسال عالمی سطح پر سب سے زیادہ فلمیں بنانے کے لئے مشہور ہندی فلم انڈسٹری بالی ووڈ گلوبل تناظر میں اپنی شناخت قائم کرنا چاہتا ہے۔موضوعات اور مناظر کو کنٹیمپری بنانے کے لئے غیر ممالک میں فلموں اور گانوں کی شوٹنگ سے شروعات کر کے فلموں کی پوری کہانی ہی غیر ملکی طرز زندگی پر مرکوز کر دی گئی، پھر وہاں کا گلیمر، تہذیب سے ہندوستان کے بھولے بھالے لوگوں کو متعارف کروایا ۔جس کے نتیجہ میںہندی فلموں کے ناظرین کی تعداد پوری دنیا میں بڑھی، اس طرح بالی ووڈ میں مغربی تہذیب کو ناظرین کے ذریعہ تسلیم کر لیا گیا۔ گزشتہ کچھ سالوں سے بالی ووڈ میں غیر ملکی دوشیزائوں کا خوب زور چل رہا ہے۔ بھلے ہی فلم میں ان کا کردار مرکز ی ہو،آئٹم ڈانس کے لئے ہو یا معاون اداکارہ کے طور پر ہو،مگر فلموں میں ان کا کردار لازمی سا ہو گیا ہے۔ انہیں اب لیڈ رول میں بھی لیا جانے لگا ہے ، ہندوستانی دوشیزائوں کے کردار میں بھی انہیں لیا جانے لگا ہے۔پرکاش جھا کی فلم ’’راج نیتی‘‘ میں رنبیر کپور کے ساتھ رومانس کرتی سرا تھامپسن اور رنبیر کپور پر پیار کے ڈورے ڈالتی کیٹرینہ کیف نے فلم میں اپنا مقام بنا لیا۔اداکار سلمان خان تو غیر ملکی دوشیزائوں کیلئے مشہور ہیں۔ تازہ خبروں کے مطابق سلمان کی فرینڈ جرمن ماڈل کلائوڈیا سسیلا بالی ووڈ میں انٹری کر رہی ہیں۔ جس کے لئے سلمان ان کی مدد بھی کر رہے ہیں۔ برطانوی ماڈل لیزا لجارس بھی سلمان خان کی فلم ’’ ویر‘‘ میں نظر آئی تھیں۔مگر ہر کسی کی قسمت کیٹرینہ کیف جیسی نہیں ہوتی ہے، نہ ہی ہر کسی کے ساتھ سلمان خان کا طویل ساتھ ہوتا ہے۔
بالی ووڈ بھی غیر ملکی اداکارائوں کی اولین پسند بن گیا ہے۔ ہندوستانی سنیما کے شو مین راج کپور نے سب سے پہلے غیر ملکی اداکارہ کو ہندوستانی سنیما سے متعارف کرایا تھا۔ انھوں نے اپنی فلم ’’میرا نام جوکر‘‘ کو ہٹ بنانے کے لئے ازبک دوشیزہ سینیا یابنکنا کو فلم میں لیا تھا۔ پڑوسی ملک پاکستان سے تو کئی اداکارائیں آئیں اور بالی ووڈ میں اپنی شناخت چھوڑ گئیں اور اپنے یہاں کی فلم انڈسٹری سے جیسے غائب ہی ہو گئیں۔فلم نکاح کی سلمیٰ آغا بالی ووڈ میں اپنی شناخت بنانے میں کامیاب رہیں۔ فلم حنا کی زیبا بختیار کو شاید ہی فلم دیکھنے والے بھولے ہوں۔اداکارہ میرا اور ضیا خان بھی کچھ ناکام اور کامیاب فلموں میں نظر آئیں اور ابھی تک خود کو قائم کرنے کی جدوجہدکر رہی ہیں۔ یہاں کام کرنے والی کئی غیر ملکی اداکارائوں کا کہنا ہے کہ انہیں اپنے ملک سے زیادہ توجہ یہاں ملتی ہے۔انہیں یہاں کی تہذیب اور رہن سہن بے حد متاثر کرتے ہیں، کئی غیر ملکی اداکارائیں تو اس انڈسٹری میں رہنا چاہتی ہیں۔دراصل چھوٹے ملک جیسے سری لنکا، پاکستان وغیرہ جہاں کی فلم انڈسٹری بہت زیادہ ترقی یافتہ  نہیں ہیں، وہاں سے آئیں اداکارائیں اپنے کریئر کو کامیابی کے افق پر لے جانے کے لئے بالی ووڈ میں آتی ہیں۔برازیلی بیوٹی جیسیل مونٹیریوں اور ’’لو آج کل‘‘ کی ہرلین کور کہتی ہیں کہ انہیں ہندوستان سے خاص لگائو ہے، اکثر لوگ انہیں پنجابی گرل سمجھ لیتے ہیں اور اس سے انہیں بے حد خوشی ہوتی ہے۔ہندوستانی فلم پروڈیوسر اور ڈائریکٹر ہالی ووڈ ہی نہیں دیگر ملکوں کی اداکارائوں کو انڈسٹری میں جگہ دے رہے ہیں۔اب تک بالی ووڈ میں کافی تعداد میں ایسی فلمیں بن چکی ہیں جن میں کئی اہم کرداروں میں غیر ملکی اداکارائوں کو لیا گیا ہے۔ایسے ہی غیر ملکی اداکارائوں کو لے کر بنائی جانے والی کئی فلمیں ابھی زیر تکمیل ہیں۔پرشانت چڈھا کے ڈائرکشن میں بننے والی فلم میںسائوتھ افریقن ماڈل کینڈس بائوچر کام کرنے والی ہیں۔
لاطینی دوشیزہ باربرا موری رتک روشن کے ساتھ فلم’’ کائٹس‘‘ میں کام کر چکی ہیں، فلم فلاپ ہوئی مگر انہیں زبردست شہرت  ملی۔ آسٹریلین گلوکارہ کائلی میناگ اکشے کمار کے ساتھ فلم’’بلیو‘‘ میں نظر آئیں، یہ فلم بھی فلاپ ہوئی مگر کائلی ہندوستانی ناظرین کا پیار پاکر خوش ہو گئیں۔ ہندوستانی لوگوں کے گوری رنگت کے تئیں لگائو کو درکنار نہیں کیا جا سکتا۔بالی ووڈ سب سے زیادہ فلمیں بنانے کے لئے جانا جاتا ہے اور اس میں غیر ملکی دوشیزائوں کی شمولیت سے فلم کو نیا فلیور مل جاتا ہے۔علاوہ ازیں ان اداکارائوں کو شامل کرنے سے فلم کو بین الاقوامی سطح پر شناخت بھی ملتی ہے۔ انہیں بولڈ سین دینے میں کوئی اعتراض نہیں ہوتاہے۔ جو آج کل کی فلموں کا فیشن بن گیا ہے۔ہالی ووڈ اداکارہ ڈینس رچرڈس فلم ’’کمبخت عشق ‘‘ میں اکشے کمار کے ساتھ نظر آئیں۔ فلم ’’دیو ڈی‘‘ سے لائم لائٹ میں آنے والی فرانسسیی دوشیزہ کالکی کوئچلین کافی شہرت حاصل کرنے کے بعد آج کل ینگ اسٹار عمران خان کے ساتھ سافٹ ڈرنک کے اشتہارمیں نظر آ رہی ہیں، اور بالی ووڈ میں خود کو قائم کرنے کے لئے جدوجہد کر رہی ہیں۔اس کے ذریعہ وہ ہندوستانی ناظرین کے دل میں اپنی جگہ قائم کرنا چاہتی ہیں اور بالی ووڈ میں کام پانے کی کوشش بھی کر رہی ہیں۔
فلم ’’کسنا ‘‘  میں وویک اوبرائے کے مدمقابل اداکارہ اینٹو نیوں برناتھ نظر آئیں۔’’رنگ دے بسنتی ‘‘ میں الیس فارین جرنلسٹ کے کردار میں نظر آئیں جو ہندوستان میں ڈاکیومنٹری فلم بنانے کے مقصد سے آتی ہیں اورعامر خان سے محبت کرنے لگتی ہیں۔ اس طرح کے کردار کے لئے ان دوشیزائوں کی ضرورت ہوتی تھی۔اداکارہ علی سلمان خان اسٹارر فلم ’’میری گولڈ‘‘ میں کچھ خاص نہیں کر پائیں۔جس کا انہیں بے حد ملال ہے۔وہیں برناڈے روڈ رک فلم ’’آئوٹ آف کنٹرول ‘‘ میں رتیش دیشمکھ کی امریکی بیوی کے کردار میں نظر آئیں مگر یہ فلم بھی سپر فلاپ رہی۔فلم ’’لگان‘‘ میں اداکارہ رچیل سیلی ایلیزبیتھ کے کردار میں نظر آئیں۔ساجد خان کی فلم ہائوس فل میں سابق مس سری لنکا اور اداکارہ جیکلین فرنانڈیز کو آئٹم ڈانسر کے طور پر لیا گیا، جیکلین کے ٹھمکوں نے اس فلم کے میوزک میں جان ڈال دی۔جیکلین پر فلمائے گئے ’’لاوارث‘‘ فلم کے ریمکس  آئٹم ڈانس ’’اپنی تو جیسے تیسے ‘‘ پر ناظرین جھومتے نظر آئے۔ اس سے پہلے یہ فلم ’’الہٰ دین‘‘ میں رتیش اور بگ بی امیتابھ بچن کے ساتھ نظر آئی تھی۔امریکی اداکارہ لنڈا ارسینیوں جان ابراہم کے ساتھ فلم ’’کابل ایکسپریس‘‘ میں آئیں، پھر آفتاب شیودسانی کے ساتھ فلم ’’آلو چاٹ‘‘ کے علاوہ فلم ’’ممبئی سالسا‘‘ میں بھی نظر آئیں۔ ان کے کام اور خوبصورتی کو سراہا گیالیکن کوئی خاص چرچا نہیں ہوا۔ بالی ووڈ میں غیرملکی دوشیزائوں کی آمد سے علاقائی سنیما میں بھی ان کی ڈیمانڈ بڑھتی جا رہی ہے۔ اب تیلگو، ملیالم اور دوسری علاقائی فلموں میں بھی غیر ملکی دوشیزائوں کی کشش بڑھ گئی ہے۔علاقائی سنیما انڈسٹری کی مسلسل ترقی کے سبب نہ صرف بالی ووڈ بلکہ ریجنل سنیما میں بھی غیر ملکی دوشیزائوں کی دلچسپی میں اضافہ ہوا ہے۔لنڈا ارسینیوں اب تک کی سب سے مہنگی مانے جانے والی ملیالم فلم ’’ہاسی راجا ‘‘ میں نظر آئیں۔انھوں نے تمل اور تیلگو فلموں میں بھی اپنی قسمت آزمائی ہے۔علاقائی سنیما کے علاوہ غیر ملکی دوشیزائیں انڈسٹری کو اپنی موجودگی کا احساس دلاتے ہوئے ٹیلی ویژن سیریز، رئلٹی شوز اور بطور پروگرام اینکر اسکرین پر نظر آنے لگی ہیں۔’’بنـٹی اور ببلی‘‘ اور ’’سلام نمستے‘‘ میں نظر آنے والی اٹلی نژاد آسٹریلیا کی اداکارہ تانیہ جیٹا ٹی وی شو فیئر فیکٹر کی کو ریپرزینٹر رہی ہیں۔ جیچ میں پلی بڑھی بجلی گرل کو ہندوستانی ناظرین سے شناخت ملی ان کے آئٹم سانگ ’’بابو جی ذرا دھیرے چلو‘‘ سے ۔ اس کے بعد فلم ’’کیسے کہیں‘‘،’’اپریچت‘‘ اور ’’رکت‘‘ میں نظر آنے کے بعد وہ ٹی وی شو خطروں کے کھلاڑی میں شامل رہی ہیں۔
ناروی اور ایرانی والدین کی بیٹی اداکارہ نگار خان میوزک ویڈیو سے نظر میں آئیں، اس کے بعد کئی فلموں جیسے ’’ردراکش‘‘،’’شادی کا لڈو‘‘،’’ڈبل کراس: ایک دھوکہ‘‘ جیسے فلموں میں بھی نظر آئیں۔پھر رئلٹی شو ’’اس جنگل سے مجھے بچائو‘‘ میں بھی اپنی ادائوں کے دم پر لوگوں کو بے ہوش کرتی نظر آئیں۔ سیف علی خان کی سابق گرل فرینڈ روزہ کیٹیلانو ’’جانے کیوں‘‘،نکشتر‘‘ اور ’’مونوپولی‘‘ جیسی فلموں کے بعد ’’خطروں کے کھلاڑی ‘‘لیول-2میں شامل رہی ہیں۔ انوبھو سنہا کی فلم ’’کیش ‘‘ میں بولڈ آئٹم نمبر دینے والی برنا عبد اللہ ، سلمان کے ساتھ معاشقہ کی افواہوںکو غلط بتاتی ہیں، وہ دوسری برازیلین اداکارہ ہیں جو بالی ووڈ میں قسمت آزما رہی ہیں۔ انھوں نے چینل وی پر ٹیلی سیریز انڈیاز ہاٹسٹ کیا اور لوگوں کی نظر میں آئیں۔
ہندوستان نہ صرف سافٹ ویئر ملٹی نیشنل کمپنیوں اور غیر ملکی سیاحوں کو بھا رہا ہے بلکہ غیر ملکی دوشیزائوں کی بھی پسند بن گیا ہے۔ بالی ووڈ کا جادو ان دوشیزائوں کے سر چڑھ کر بول رہا ہے۔انڈسٹری کا گلیمر انہیں اس قدر کھینچتا ہے کہ وہ یہاں پورا وقت دے رہی ہیں۔ نگارخان، یانا گپتا، برنا عبد اللہ، کیٹرینہ کیف یہ چند ایسے ہی نام ہیں۔ کیٹرینہ تو یہاں کی فلم انڈسٹری کی ممتاز اداکارائوں میں شمار کی جاتی ہیں۔ اس میں گزرے زمانے کی نیپالی اداکارہ منیشا کوئرالہ بھی شامل ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *